کشمیر: عید پر ہندو مسلم کشیدگی، دو ہلاک

Image caption پولیس نے حالات پر قابو پانے کے لیے نیم فوجی دستے اور فوج کی مدد بھی طلب کی

عیدالفطر کے موقعہ پر بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر کے جنوبی ضلع کشتواڑ میں ہندو اور مسلم باشندوں کے درمیان پرتشدد تصادم کے دوران دو افراد ہلاک ہونے کے بعد کرفیو نافذ کر دیا گیا ہے۔

علیحدگی پسند رہنما سید علی گیلانی نے ان واقعات کے لیے حکومت کو ذمہ دار ٹھہرایا اور وادی بھر میں سنیچر کو ہڑتال کی کال دے دی ہے۔

کشمیر: ہلاکتوں کے خلاف ہڑتال، کرفیو نافذ

کشمیر:پانچ روز میں 200 نوجوان گرفتار

کشمیر میں ہلاکتوں کے خلاف مظاہرے جاری

کشمیر کی حکومت کے وزیر داخلہ سجاد کچلو نے بتایا کہ ’ضلع میں حالات کشیدہ لیکن قابو میں ہیں۔دونوں فرقوں کے رہنمائوں کے ساتھ حکومت رابطہ میں ہے۔‘

یہ بات قابل ذکر ہے کہ کشمیر کا جنوب مشرقی ضلع کشتواڑ ہمالیہ پہاڑی سلسلے کے دشوار گذار خطے میں واقع ہے۔ یہاں سے دریائے چناب بھی گزرتا ہے جو کشتواڑ کے ساتھ ساتھ ڈوڈہ، رام بن اور بھدرواہ اضلاع کو سیراب کرتا ہے۔ ہندو اکثریتی ضلع جموں کے پڑوس میں واقع اس خطے کو چناب ویلی کہتے ہیں اور اس کی سرحدیں بھارتی ریاست ہماچل پردیش سے بھی ملتی ہیں۔ ضلع میں ہندوں کی آبادی چالیس فیصد ہے اور اکثر اوقات ایسے فسادات رونما ہوتے رہتے ہیں۔

عینی شاہدین نے بی بی سی کو بتایا کہ جمعہ یعنی عید الفطر کے روز جب مسلمان عیدگاہ کی طرف جوق در جوق نماز کے لیے جا رہے تھے تو بعض ہندو نوجوانوں نے ان پر پتھراؤ کیا اور ان کا مذاق اُڑایا۔ نماز کے بعد مسلمان نوجوانوں نے جلوس نکالا اور ہندوں کی املاک کو نذرآتش کیا جس کے بعد ہندوں نے بھی مسلمانوں کی دکانوں کو آگ لگا دی۔ پولیس کا کہنا ہے کہ آتشزدگی کے واقعات میں زیادہ تر ہندوں کی املاک کو نقصان پہنچا گیا ہے۔

Image caption حکومت نے اس واقعہ کی تحقیقات کا حکم دیا ہے اور ضلعی پولیس اور سول انتظامیہ کے افسروں کو تبدیل کردیا گیا ہے

پولیس نے حالات پر قابو پانے کے لیے نیم فوجی دستے اور فوج کی مدد بھی طلب کی۔

پولیس کارروائی کے دوران اروند کمار نامی ایک شہری گولی لگنے سے ہلاک ہوگیا جبکہ دوفرقوں کے درمیان پرشدد جھڑپوں کے دوران مقامی ہوٹل میں ملازمت کررہا ایک مسلمان شہری بھی ہلاک ہوگیا۔

دریں اثنا حکومت نے اس واقعہ کی تحقیقات کا حکم دیا ہے اور ضلعی پولیس اور سول انتظامیہ کے افسروں کو تبدیل کردیا گیا ہے۔

واضح رہے ضلع میں بارہ اگست دو ہزار آٹھ کو بھی ایسے فسادات میں تین شہری مارے گئے اور ڈیڑھ سو زخمی ہوگئے۔

اسی بارے میں