ممبئی: تلاش کا کام مکمل، ہلاکتوں کی تعداد 60

ممبئی
Image caption عمارت سے کل 33 افراد کو زندہ نکالا جا سکا۔ ایک بچے کو بارہ گھنے بعد بچا لیا گیا

بھارت کے معاشی دارالحکومت ممبئی میں جمعہ کو گرنے والی چار منزلہ عمارت میں امدادی کام مکمل ہو گيا ہے اس میں کل 60 افراد کی ہلاکتوں کی تصدیق کی گئی ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ امدادی کام میں لگے کارکنوں نے اتوار تک 33 لوگوں کو ملبے سے زندہ نکالا۔

ملبے سے زندہ نکلنے والا آخری آدمی ایک 50 سالہ شخص ہے جسے سنیچر کو بچایا گيا۔انھیں چھ گھنٹے کی مسلسل جدوجہد کے بعد شدید زخمی حالت میں نکالیا گیا تھا۔

اس سے قبل عمارت گرنے کے 12 گھنٹے بعد ایک بچے کو سلامت نکالا گیا تھا۔

نیشنل ڈیزاسٹر ریسپانس فورس کے مقامی کمانڈر آلوک اوستھی نے کہا کہ عمارت کے ملبے کے نیچے جتنے افراد کے دبنے کا خدشہ تھا انہیں تلاش کر لیا گيا ہے اور اتوار کی صبح اس آپریشن کو ختم کر دیا گیا۔

واضح رہے کہ جمعہ کو عمارت گرنے کے بعد سے امدادی کارکنوں نے کرین کے ذریعے ملبے سے لوگوں کو نکالنا شروع کردیا تھا۔

عمارت گرنے کا واقعہ 27 ستمبر کی صبح ممبئی کی ڈاک یارڈ روڈ پر پیش آیا تھا اور گرنے والی عمارت ممبئی میونسپل کارپوریشن کی تھی۔

بہر حال عمارت گرنے کی وجہ ابھی تک معلوم نہیں ہو سکی ہے۔

عمارت گرنے کی خبر ملتے ہی فائر بریگیڈ کی گاڑیاں، پولیس اور انتظامیہ کے اہلکار فوری طور پر موقع پر پہنچ گئے تھے اور امدادی کام شروع کر دیا گیا تھا۔

امدادی کام میں مختلف محکموں کے پانچ سو ملازمین اور اہلکاروں نے حصہ لیا تھا۔

ممبئی میں گزشتہ چھ ماہ میں عمارت گرنے کا یہ تیسرا واقعہ ہے۔ اسی سال اپریل میں ایسے ہی ایک حادثے میں 72 افراد ہلاک ہوئے تھے اور جون میں گرنے والی عمارت سے 10 افراد کی لاشیں ملی تھیں جن میں پانچ بچے شامل تھے۔

ممبئی کے میئر سنیل کے مطابق تباہ ہونے والی عمارت میں ممبئی میونسپل کونسل کے مارکیٹنگ ڈیپارٹمنٹ کے ملازمین رہتے تھے۔ ان کے مطابق اس میں 22 فلیٹ تھے جن میں تقریباً 250 افراد مقیم تھے۔

انہوں نے بتایا کہ یہ عمارت خستہ حال تھی اور یہاں رہنے والوں کو عمارت خالی کرنے کا نوٹس دیا گیا تھا جبکہ عمارت کی مرمت جلد ہی شروع ہونے والی تھی۔

ممبئی کے میئر نے بتایا کہ دس سال پہلے اس عمارت کی مرمت کی گئی تھی۔

اسی بارے میں