BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Wednesday, 25 April, 2007, 17:51 GMT 22:51 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
پاکستانی پاسپورٹ جلانے پر جیل
 

 
 
رنھ
پاکستانی پاسپورٹ جلانے کے الازام میں احتجاجیوں کو جیل بھیج دیا گیا
دلی کی ایک ذیلی عدالت میں ان پاکستانی شہریوں کی ضمانت کی درخواست پر سماعت ہوئی ہے جنہیں پاکستانی پاسپورٹ جلانے کےالزام میں گرفتار کیا گیا تھا۔

منگل کو پاکستانی پاسپورٹ جلانے کے الزام میں کو دلی کی تہاڑ جیل بھیج دیا گیا تھا۔

عدالت نے کہا ہے کہ وہ اس معاملے میں وزارت خارجہ، پاکستانی ہائی کمیشن اور وزارت داخلہ کی رپورٹ کا انتظار کر رہی ہے اور ان رپورٹس کی بنیاد پر ہی اس بارے میں کوئی فیصلہ کیا جائےگا۔

پچاس سے زیادہ ان افراد کا تعلق مہدی انٹرنیشنل فاؤنڈیشن نامی تنظیم سے بتایا جاتا ہے۔ ایک شخص میر لالی نےاپنے آپ کو مہدی انٹرنیشنل فاؤنڈیشن کا جنرل سکریٹری بتاتے ہوئے دعویٰ کیا کہ ’پاکستان میں ان کی تنظیم کے ارکان کو ان کے عقیدے کے سبب ہراساں کیا جاتا ہے اس لیے یہ لوگ ہندوستان میں سیاسی پناہ چاہتے ہیں‘۔

ان کا کہنا تھا ’احتجاج کے دوران جذبات میں آکر لوگوں نے اپنے پاسپورٹ یہ سمجھ کر جلا دیے ہیں کہ اب انہیں واپس نہیں جانا ہے۔ پاکستان میں ان کی زندگی کو خطرہ ہے اس لیے کوئی بھی واپس نہیں جانا چاہتا ہے‘۔

اس تنظیم کے پیروکاروں کا دعویٰ ہے کہ ان کے پیشوا ریاض گوہر شاہی ’امام مہدی‘ ہیں۔

مہدی انٹرنیشنل فاؤنڈیشن کے جنرل سکریٹری
 احتجاج کے دوران جذبات میں آکر لوگوں نے اپنے پاسپورٹ یہ سمجھ کر جلا دیے ہیں کہ اب انہیں واپس نہیں جانا ہے۔ پاکستان میں ان کی زندگی کو خطرہ ہے اس لیے کوئی بھی واپس نہیں جانا چاہتا ہے۔
 

حال ہی میں دلی میں پاکستان کے خلاف ایک احتجاجی مظاہرے میں بہت سے لوگوں نے اپنے پاکستانی پاس پورٹس جلا دیے تھے ۔ اس معملے میں پولیس نے سات بچوں اور انیس خواتین سمیت 55 افراد کو حراست میں لیا ہے۔

ایک پولیس افسر نے اپنا نام خفیہ رکھنے کی شرط پر بتایا کہ سبھی افراد تہاڑ جیل میں قید ہیں اور اس معاملے پر کوئی بیان دینے سے گریز کرنے کی ہدایات دی گئی ہیں۔

ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ ایک مخصوص مذہبی عقیدے کے لوگوں کو اتنی بڑی تعداد میں تقریباً ایک ساتھ ویزا کیسے جاری کیا گیا۔ اس بارے میں ہندوستان کی وزارت خارجہ اور پاکستان کے ہائی کمیشن نے خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔

 
 
اسی بارے میں
شیرون مخالف مظاہرے
09 September, 2003 | صفحۂ اول
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد