Got a TV Licence?

You need one to watch live TV on any channel or device, and BBC programmes on iPlayer. It’s the law.

Find out more
I don’t have a TV Licence.

خلاصہ

  1. پاناما کیس میں سپریم کورٹ کی جانب سے نااہل کیے جانے کے بعد نواز شریف نے عوام سے رابطے کے لیے ریلی کے ذریعے لاہور جانے کا فیصلہ کیا۔
  2. سابق وزیراعظم نے اسلام آباد کے پنجاب ہاؤس سے سفر کا آغاز کیا۔ راولپنڈی سے براستہ جی ٹی روڈ سفر کے دوران جہلم، گجرات، گوجرانوالہ، مریدکے کے بعد اب لاہور کے قریب پہنچ گئے ہیں۔
  3. نواز شریف کو نااہل کیے جانے کے بعد پارٹی کی جانب سے شاہد خاقان عباسی کو وزیر اعظم کے عہدے کے لیے نامزد کیا گیا تھا۔
  4. الیکشن کمیشن نے مسلم لیگ ن کو نیا صدر منتخب کرنے کے لیے نوٹس بھی جاری کر دیا ہے۔

لائیو رپورٹنگ

time_stated_uk

تکنیکی مسائل کی بنا پر یہ صفحہ اب لائیو نہیں ہے۔ مزید اپ ڈیٹس سے باخبر رہنے کے لیے یہاں کلک کیجیئے

لاہور میں کارکنوں کا جوش و خروش

گھوڑوں کا رقص اور ڈھول کی تھاپ پر بھنگڑے

داتا دربار میں کارکنان کی آمد کا سلسلہ جاری، گھوڑوں کا رقص، ڈھول کی تھاپ پر بھنگڑے

نواز شریف کا استقبال
BBC

نامہ نگار ذیشان ظفر کے مطابق نواز شریف کا مرکزی قافلہ لاہور کے باہر شاہدرہ میں رکا ہوا اور اور مزید قافلے اس میں آ آ کر مل رہے ہیں۔

شاہدرہ کے مقام پر کارکنان کی آمد کا سلسلہ جاری

لاہور کے پاس جلوس بڑا ہونے لگا

نامہ نگار ذیشان ظفر نے خبر دی ہے کہ لاہور پہنچنے سے پہلے نواز شریف کا جلوس مومینٹم پکڑتا جا رہا ہے۔

کالا شاہ کاکو انٹرچینج پر فیصل آباد، جھنگ، سرگودھا اور دوسرے علاقوں سے لوگ آ کر جلوس میں شامل ہونے لگے ہیں جس سے اس میں خاصا اضافہ ہو گیا ہے۔

جگہ جگہ شہباز شریف کے استقبالیہ بینروں کی تعداد میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے، جب کہ اس سے پہلے وہ خال خال ہی نظر آتے تھے۔

رانا ثنااللہ کے بینروں پر لکھا تھا: ’میاں نواز شریف سے اظہارِ یکجہتی کے لیے‘

یہاں سے شاہدرہ کا فاصلہ 15 سے 20 منٹ ہے لیکن جلوس کی رفتار دیکھ کر اندازہ ہوتا ہے کہ اس میں وقت لگے گا۔

قافلہ شاہدرہ کی حدود میں داخل ہو گیا ہے۔

نواز شریف کا جلوس
BBC

داتا دربار کے خطاب کے بعد رائیونڈ

کمشنر لاہور عبداللہ سنبل کے مطابق داتا دربار پر خطاب کے بعد نواز شریف رائیونڈ اپنی رہائش گاہ پر چلے جائیں گے۔

پیر مکی
BBC
پیر مکی کے مقام پر سٹیج تیار، سیکیورٹی کے سخت انتظامات

نواز شریف داتا دربار کے سامنے خطاب کریں گے

ڈپٹی کمشنر لاہور سمیر سید نے بتایا ہے کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف شاہدرہ کے راستے لاہور میں داخل ہونے کے بعد راوی پل اور آزادی چوک سے ہوتے ہوئے داتا دربار کے سامنے پیر مکی کے مقام پر پہنچیں گے جہاں وہ اپنے اس سفر کا آخری خطاب کریں گے۔

استقبال کی تیاریاں
BBC

شاہدرہ میں تیاریاں مکمل

ادھر لاہور سے نامہ نگار عمردراز ننگیانہ نے بتایا ہے کہ نواز شریف کے کاروان کے استقبال کے لیے ان کے حامی بڑی تعداد میں شاہدرہ پہنچ گئے ہیں۔ اس موقعے پر شاہدرہ میں تیاریاں مکمل کر لی گئی ہیں۔

نواز شریف شاہدرہ میں خطاب کرنے کے بعد داتا دربار کی جانب روانہ ہوں گے۔

نواز شریف
Getty Images

روشنیوں اور جنریٹروں کا بندوبست

ہمارے نامہ نگار ذیشان ظفر نواز شریف کے قافلے کے ساتھ ساتھ رواں دواں ہیں۔ انھوں نے خبر دی ہے کہ مریدکے میں نواز شریف کے قافلے کے لیے لگائے گئے استقبالی کیمپوں میں روشنیوں اور جنریٹروں کا بندوبست کیا گیا تھا جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ شاید منتظمین کو خدشہ تھا کہ قافلہ تاخیر کا شکار ہو سکتا ہے۔

مریدکے میں ٹریفک جام

نواز شریف کا قافلہ مریدکے سے نکلنے کے بعد لاہور کی جانب رواں دواں ہے۔ ہمارے نامہ نگار ذیشان ظفر کے مطابق جوں جوں قافلہ لاہور کی جانب بڑھ رہا ہے، قافلے میں شامل گاڑیوں کی تعداد میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔

اس قافلے میں جو گاڑیاں شامل ہیں ان کی بڑی تعداد پرائیویٹ کاروں پر مشتمل ہے، اور بسیں یا ویگنیں بہت کم ہیں۔

نامہ نگار کے مطابق مریدکے میں اس وقت ٹریفک جام ہو گیا جب سابق وزیرِ اعظم نواز شریف کے خطاب کے بعد لنگر بٹنا شروع ہوا۔ خاصی دیر تک کہیں جا کر ٹریفک کا نظام بحال ہو سکا۔

نواز شریف کا قافلہ لاہور کے قریب

نواز شریف مریدکے میں مختصر خطاب کرنے کے بعد لاہور کی سمت روانہ ہو گئے ہیں۔ ہمارے نامہ نگار ذیشان ظفر کے مطابق انھوں نے مریدکے میں تقریر کرتے ہوئے بنیادی طور پر وہی باتیں دہرائیں کہ چند لوگ 20 کروڑ کی آبادی کے پاکستان کے مالک نہیں ہو سکتے۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان کے اصل مالک پاکستان کے عوام ہیں۔

قافلہ تیزی سے آگے بڑھنے لگا

نواز شریف کا قافلے نے کاموکی سے نکالنے کے بعد اپنی رفتار بڑھا لی ہے اور اب سے کچھ دیر قبل قافلہ مریدکے کی حدود میں داخل ہونے کو تھا۔

سیالکوٹ سے کارکنان لاہور پہنچ رہے ہیں

ہمارے نامہ نگار کے مطابق کہ گجرانوالہ سے نکلنے کے بعد سیالکوٹ کے علاقے سے کارکنوں کی بڑی تعداد نے آ کر مرکزی ریلی میں شمولیت اختیار کی ہے۔

نواز
BBC

نواز شریف کا قافلہ کاموکی پار کر کے لاہور کی جانب گامزن

نامہ نگار ذیشان ظفر نے بتایا کہ نواز شریف کا قافلہ اب سے کچھ دیر قبل کاموکی کراس کر کے لاہور کی جانب روانہ ہو گیا ہے اور گجرانوالہ سے روانگی کے بعد جی ٹی روڈ پر مختلف مقامات پر لیگی کارکن سڑک کے دونوں جانب کھڑے ہو کر نواز شریف کا استعقبال کر رہے ہیں۔

گھوڑوں کا رقص اور پارٹی کے ترانے

نامہ نگار ذیشان ظفر نے گجرانوالہ سے بتایا کہ شہر سے باہر نکلتے ہی ایک ٹول پلازہ ہے جہاں نواز شریف کا قافلہ متوقع ہے اور اس مقام پر بڑی تعداد میں لیگی کارکن جمع ہیں۔ یہاں گھوڑوں کا رقص کروایا جا رہا ہے اور پارٹی کے ترانے بجائے جا رہے ہیں۔

’لاہور سے پہلے ایک اور جگہ خطاب کریں گے‘

ایک نجی چینل سے بات کرتے ہوئے لیگی رہنما طلال چوہدری نے کہا میاں نواز شریف لاہور میں ریلی کے آخری خطاب سے قبل ایک اور مقام پر عوام سے خطاب کریں گے۔

نواز شریف کا قافلہ گجرانوالہ سے لاہور کے لیے روانہ ہوگیا

نواز شریف
BBC
نواز شریف
BBC

’پانچ سال کا حق بنتا ہے‘

نواز شریف کی ریلی میں شامل جمیل بن کا کہنا ہے کہ اگر ایسے ہی حربے استعمال ہوتے رہے تو نواز شریف پہلے سے بھی زیادہ ووٹ لے کر آئیں گے۔

’پانچ سال کا حق بنتا ہے‘

’نہاری پائے کو ہاتھ بھی نہیں لگایا‘

نامہ نگار ذیشان ظفر نے بتایا کہ سنیچر کے روز میاں نواز شریف کے لیے ناشتے میں گجرانوالہ کے روایتی پکوان جن میں نہاری اور پائے شامل ہیں، پیش کیے گئے تاہم میاں نواز شریف نے انتہائی سادہ ناشتہ کیا اور ان کھانوں کو ہاتھ بھی نہیں لگایا۔ اس کے علاوہ سابق وزیراعظم نواز شریف نے گجرانوالہ میں مقامی لیگی رہنمائوں سے طویل ملاقاتیں بھی کیں ہیں۔

نواز شریف
Twitter

کچھ ہی دیر میں لاہور روانگی متوقع

سابق وزیراعظم نواز شریف اس وقت گجرانوالہ بائی پاس کے قریب مسلم لیگ ن کے مقامی لیڈر باؤ آصف اور باؤ جاوید کی مشترکہ رہائش گاہ میں موجود ہیں اور کچھ ہی دیر میں ان کی لاہور کی جانب روانگی متوقع ہے۔ اس وقت اس مکان کے باہر سکیورٹی کی گاڑیاں کافی تعداد میں ہیں اور کارکنان کو اس رہائش گاہ میں آنے نہیں دیا جا رہا۔ اس مکان سے تقریباً 200 سے 300 گز دور ایک استقبالی کیمپ ہے جہاں بڑی تعداد میں لیگی کارکن موجود ہیں۔

سابق وزیراعظم نواز شریف
BBC

گوجرانوالہ میں بھی بڑی تعداد

گجرات میں جلسہ عام سے مختصر خطاب کے بعد گوجرانوالہ میں بھی میاں نواز شریف نے ایک مختصر خطاب کیا۔ مسلم لیگ ن کے حامیوں کی بڑی تعداد وہاں موجود تھی۔ اطلاعات کے مطابق آج شب نواز شریف اسی شہر جو کہ مسلم لیگ ن کا حلقہ بھی ہے میں قیام کریں گے اور کل لاہور پہنچیں گے۔

نواز ریلی
BBC

’جاں بحق کارکن کے گھر جاؤں گا‘

14 سالہ بچے کی ہلاکت کے بارے میں بات کرتے ہوئے نواز شریف نے اپنی تقریر کے اختتام میں کہا کہ وہ جاں بحق کارکن کے گھر جائیں گے اور جو ہو سکا مدد کریں گے۔

مقامی سطح پر ملنے والی اطلاعات کے مطابق 14 سالہ حامد میاں نواز شریف کے پروٹول میں شامل ایک گاڑی سے ٹکرا کر زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے ہلاک ہو گیا تھا۔ تاہم پنجاب کے وزیرداخلہ رانا ثنا اللہ نے اپنے میڈیا بیان میں اس کی تردید کی تھی اور کہا تھا کہ بچے کی ہلاکت پروٹوکول کی گاڑی سے ٹکرانے سے نہیں ہوئی جبکہ وزیراعلیٰ پنجاب نے واقعے کی جامع تحقیقات کا حکم دیا ہے۔

بچے کی ہلاکت پر مسلم لیگ ن پر کڑی تنقید

سوشل میڈیا پر صارفین کی ایک بڑی تعداد مبینہ طور پر سابق وزیراعظم کے پروٹوکول میں شامل ایک گاڑی سے ٹکرانے پر بچے کی ہلاکت پر شدید تنقید کر رہے ہیں۔

’ساڑھے تین سال سے سازشیں ہو رہی ہیں‘

نواز شریف نے کہا کہ ان کے خلاف ساڑھے تین سال سے سازشیں ہو رہی ہیں اور آج انھیں وزارت عظمی سے بڑی رسوائی سے نکالا گیا ہے۔

انھوں نے ایک بار پھر پاناما لیکس کے فیصلے پر سوال اٹھایا کہ نواز شریف نے پاکستان سے کونسی عذاری کی، کویی کرپشن ثابت تو کرو۔ نواز شریف کو کیوں نکالا گیا۔

’امن قائم ہو رہا تھا‘

میاں نواز شریف نے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملک ترقی کر رہا تھا لوڈشیڈنگ ختم ہو رہی تھی امن قائم ہو رہا تھا تو ملک میں دھرنے شروع ہو گئے۔

ججوں کی بحالی کے لیے جب لانگ مارچ کیا۔۔۔

سابق وزیراعظم نے گوجرانوالہ میں جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس علاقے کی اپنی ایک تاریخ ہے۔ جب ججوں کی بحالی کے لیے وہ لانگ مارچ کر رہے تھے تو جب لاہور سے گوجرانوالہ پہنچے تو اطلاع ملی تھی کہ معزول ججوں کو بحال کر دیا گیا ہے۔

’نااہل سڑکوں پر کیوں‘

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر پاکستان میں ٹاپ ٹرینڈز میں ایک سوال یہ بھی کیا جا رہا ہے کہ نااہل وزیراعظم سڑکوں پر کیوں نکل کر آئے ہیں۔

نواز شریف جلسہ گاہ پہنچ گئے

سابق وزیراعظم گوجرانوالہ میں مسلم لیگ ن کے حامیوں سے خطاب کے لیے جلسہ گاہ پہنچ گئے ہیں۔

مسلم لیگ ن
BBC
گجرانوالا میں موجود مسلم لیگ ن کے ایک کارکن

حامد
BBC
بی بی سی کے وجدان ڈار کے مطابق مبینہ طور پر سابق وزیراعظم کے پروٹوکول کی گاڑی سے ٹکرا کر ہلاک ہونے والے بچے حامد کی عمر 14 سال تھی اور وہ چھٹی جماعت کے طالبعلم تھے۔

نواز شریف کا گجرات سے گوجرانوالہ کا سفر

نواز شریف
BBC

’میرا وزیراعظم نواز شریف‘

وفاقی وزیر دفاع خرم دستگیر جو کہ مسلم لیگ ن کے ٹکٹ پر گوجرانوالا سے ایم این اے منتخب ہوئے اپنے حلقے میں میاں نواز شریف کی آمد کے موقع پر جلسہ گاہ میں موجود ہیں اور کارکنان سے خطاب کر رہے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ میرا وزیراعظم نواز شریف ہے۔

گوجرانوالہ
BBC
گوجرانوالہ میں میاں نواز شریف کی آمد کے موقع پر مسلم لیگ کے کارکنان

نواز شریف کا قافلہ گوجرانوالہ میں

پاکستان کے سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کا قافلہ گوجرانوالہ پہنچ گیا ہے۔ سرکاری ٹی وی کے مطابق نواز شریف گوجنرانوالہ میں بھی کارکنوں سے خطاب کریں گے۔

وزیراعلیٰ کا نوٹس

حکومتِ پنجاب کی جانب سے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری پیغام میں کہا گیا ہے کہ وزیراعلیٰ شہباز شریف نے گجرات میں پیش آنے والے واقعے کا نوٹس لے لیا ہے اور اس واقعے کی جامع تحقیقات کرنے کا حکم دیا ہے۔

گجرات میں مبینہ طور پر سابق وزیراعظم کے سکواڈ میں شامل گاڑی سے ٹکرانے کے نتیجے میں بچے کی ہلاکت ہوئی۔

@CMShehbaz The chief minister has ordered a comprehensive investigation from every aspect of the incident.

بی بی سی کے وجدان ڈار نے گجرات میں نواز شریف کے خطاب سے قبل جلسہ گاہ پہنچنے کے وقت چند مناظر فلمبند کیے۔

گجرات میں نواز شریف کا جلسہ، چند مناظر