BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Saturday, 19 March, 2005, 02:07 GMT 07:07 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
’انکار کرنا قرآن نے ہی سکھایا‘
 

 
 
ڈاکٹر آمنہ ودُود
’ہاتھ کاٹنے کی سزا یا بیوی کو مارنے کی اجازت صحیح نہیں ہیں۔‘
نیو یارک میں اپر مین ہیٹن کی 110th سٹریٹ پر تاریخ رقم کرنے والی ڈاکٹر امینہ ودُود ورجینیا کامن ویلتھ یونیورسٹی میں شعبہ فلسفہ اور مذاہب میں اسلامیات کی پروفیسر ہیں۔

ڈاکٹر امینہ شمالی امریکہ میں اسلامی سکالرز کے حلقوں میں کوئی انجانا نام نہیں۔ ان کی کتاب ’قرآن اور خواتین۔۔‘ ایک خاتون کے نکتہ نظر سے قرآن کی کی ایک اہم تشریح مانی جاتی ہے۔

ڈاکٹر امینہ ، جو افریقی نژاد ہیں، یہ یقین رکھتی ہیں کہ مذہب اور روحانیت میں خواتین کو بھی قیادت کا اختیار ہونا چاہئیے۔ ڈاکٹر امینہ اسلامی تاریخ اور عقائد کے تناظر میں رہتے ہوئے ایسی روایات کو تبدیل کرنے کا پرچار کرتی ہیں جو انُ کے خیال میں فرسودہ ہیں۔ مثال کے طور پر ڈاکٹر امینہ حدود کی سزاؤں کی مخالفت کرتی ہیں اور ان کا کہناہے کہ ہاتھ کاٹنے کی سزا یا بیوی کو مارنے کی اجازت صحیح نہیں ہیں۔

انہوں نے حال میں کینیڈا کے شہر ٹورونٹو میں نور کلچرل سینٹر میں دئیے گئے ایک لیکچر میں کہا تھا کہ بحیثیت ایک مسلمان اللہ ان کے دل کے بہت قریب ہے اور وہ مکمل ایمانداری کا مظاہرہ کرتے ہوئے اس بارے میں جھوٹ نہیں بولنا چاہتیں کہ وہ قرآن کی کچھ آیتوں کے بارے میں کیا سوچتی ہیں۔

امریکہ میں ڈاکٹر امینہ کے ناقدین کی بھی کمی نہیں ہے اور انہیں مسلسل بہت سخت تنقید کا سامنا رہتا ہے۔ کینیڈا میں دئیے گئے لیکچر میں ہی ان پر کئی اسلامی سکالرز نے سخت تنقید کی تھی اور کہا تھا انہیں قرآن اور عربی زبان کی سمجھ نہیں ہے اور یہ کہ وہ اسلام پر یقین نہیں رکھتیں۔

لیکن ڈاکٹر امینہ کا یہ اصرار ہے کہ اسلام ہی انہیں یہ سکھاتا ہے کہ ایسی روایات جو اسلام کی ابتدا میں ایک خاص تاریخی اور ثقافتی پس منظر میں اس کا حصہ بنائی گئی تھیں اب تبدیل کر دینی چاہئیں۔ انہوں نے کینیڈا کے اس لیکچر کے دوران کہا تھا کہ ’یہ قرآن ہی ہے جو مجھے یہ راستہ دکھاتا ہے کہ انکار کیسے کیا جائے۔‘

لیکن انہیں امریکہ میں اتنی سخت مخالفت کا سامنا ہے کہ جمعے کے نماز کی امات کرنے کے لئے منتظمین کو دھمکیوں کی وجہ سے نماز کا مقام تبدیل کرنا پڑا۔

 
 
لالے سیدیگایران کی لٹل شوماکر
کیا لالے مردوں کو بھی پیچھے چھوڑ دیں گی؟
 
 
اسی بارے میں
 
 
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد