زیادتی کا شکار طالبہ کی آخری رسومات

آخری وقت اشاعت:  اتوار 30 دسمبر 2012 ,‭ 13:43 GMT 18:43 PST
  • دو ہفتے قبل دلّی میں جنسی زیادتی اور مار پیٹ کا شکار ہونے والی لڑکی کی لاش سنگاپور سے اتوار کی صبح خصوصی طیارے سے دلّی لائی گئی۔
  • اس طالبہ کو علاج کے لیے سنگاپور لے جایا گیا تھا جہاں وہ زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسی تھیں۔ دلی آمد کے بعد لاش کو شمشان گھاٹ لے جایا گیا جہاں ان کی آخری رسومات ادا کی گئيں۔
  • طالبہ کا تابوت ایک خصوصی ایمبولنس میں رکھا گیا تھا
  • دلّی میں خاتون کی لاش آنے سے پہلے ان کے پولیس اہلکاروں کی بڑی تعداد تعینات تھی۔
  • لڑکی کے مکان کے علاوہ ہوائی اڈے کے راستے اور شمشان گھاٹ پر بھی پولیس اہلکار تعینات تھے
  • اس واقعے کے خلاف بھارت کے مختلف شہروں میں احتجاجی مظاہرے اور متاثرہ لڑکی کے لیے دعائیہ تقاریب منعقد ہوئیں
  • بھارتی فلمی دنیا بھی اس واقعے سے متاثر نظر آئی اور فنکاروں اور فلمی ہستیوں نے نہ صرف اس کی مذمت کی بلکہ احتجاجی جلوس بھی نکالے
  • بھارتی عوام خصوصاً خواتین کی بڑی تعداد اس واقعے کے ذمہ داران کو قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہ لیے سڑکوں پر نکلی
  • یہی نہیں بلکہ فنکاروں نے اپنے غم اور جذبات کا اظہار ساحلِ سمندر کے کنارے بھی کیا

ملٹی میڈیا

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔