’ہم بہت بے حس ہو چکے ہیں‘

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 5 جنوری 2013 ,‭ 16:28 GMT 21:28 PST

میڈیا پلئیر

اس پر دلی میں تجزیہ نگار ڈاکٹر پشپش پنت نے بی بی سے اردو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ہم اتنے بے حس ہو چکے ہیں کہ جب تک ہمارے اوپر کچھ نہ بیتے ہم چپ چاپ دیکھتے رہے ہیں۔

سنئیےmp3

اس مواد کو دیکھنے/سننے کے لیے جاوا سکرپٹ آن اور تازہ ترین فلیش پلیئر نصب ہونا چاہئیے

متبادل میڈیا پلیئر چلائیں

بھارت کے دارالحکومت دلی میں اجتماعی جنسی زیادتی کا شکار ہونے والی لڑکی کے دوست نے ایک ٹی وی چینل کو دیےگئے انٹرویو میں اس واقعے کی تفصیلات اور اس کے بعد پولیس اور عوام کے ردعمل پر بات کی تھی۔ ان کے مطابق جب انہیں اور متاثرہ لڑکی کو عریاں حالت میں بس سے پھینک دیا گیا تو انہوں نے راہ پر آتے جاتے لوگوں کو روکنے کی کوشش کی لیکن بیس سے پچیس منٹ تک کوئی نہیں رکا۔

اس پر دلی میں تجزیہ نگار ڈاکٹر پشپش پنت نے بی بی سے اردو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ہم اتنے بے حس ہو چکے ہیں کہ جب تک اپنے اوپر کچھ نہ بیتے رہی ہو تو ہم چپ چاپ دیکھتے رہے ہیں۔

ملٹی میڈیا

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔