’محاذِ جنگ کی خواب گاہیں‘

آخری وقت اشاعت:  پير 4 فروری 2013 ,‭ 09:02 GMT 14:02 PST
  • فوٹوگرافر ایڈ گولڈ نے دو سال برطانوی رجمنٹ ’2 پیرا‘ کے فوجیوں کے ساتھ گزارے اور ان کے اڈوں اور ان کی تعیناتی کے مقامات پر تصاویر لیں۔ انہوں نے جنگ کی تصاویر کے علاوہ ایسی تصاویر بھی لیں جنہیں انہوں نے ’محاذ کی خواب گاہوں‘ کا نام دیا۔
  • ایڈ گولڈ کے کہنا ہے کہ انہیں ایک صحرائی پسِ منظر میں شوخ رنگوں، بستروں کے تنوع اور ان کی مختصر جگہ پر ترتیب نے بہت متاثر کیا۔
  • فوجیوں کے سونے کی جگہ ہی ان کی ذاتی جگہ ہے اور ہر فوجی کی جگہ دوسرے فوجی کی جگہ سے مختلف اور انوکھی ہے، چاہے وہ مرد ہے یا عورت۔
  • گولڈ کا کہنا ہے کہ ’فوجیوں کو محاذ پر بہت مختصر سامان لیجانے کی اجازت ہے تو ان تصاویر میں جو دکھائی دے رہا ہے وہ ان فوجیوں کے لیے سب سے اہم اور ان کی زندگی سے مطابقت رکھتی ہوئی چیزیں ہیں۔
  • ’ان کے بستر اور ان کی کِٹ ایک ایسی جگہ ہے جہاں وہ ایک گشت کے بعد آکر دوسرے گشت سے پہلے اپنی توانائی بحال کر سکتے ہیں۔‘
  • گولڈ نے محسوس کیا کہ فوجی اس کی تصاویر کے لیے پوز کرنے پر تیار تھے جس سے اُن کے خیال میں اُن کے گھر والوں کو ایک اندازہ ہو گا کہ وہ کِس قسم کے حالات میں رہ رہے ہیں اور اُن کے کام میں کیا کچھ کرنا ہے۔
  • گولڈ نے کہا کہ ’میری پہلی ترجیح تھی کہ میں ان فوجیوں کی تصاویر کھینچ کر افغان ٹرسٹ کے لیے چندہ اکھٹا کروں جو کہ ان چھاتہ برداروں کی امداد کے لیے بنایا گیا ایک رفاہی ادارہ ہے‘۔
  • چھاتہ بردار فوجیوں کی اس رجمنٹ ’2 پیرا‘ کے ساتھ ساتھ ایڈ گولڈ نے کچھ افغان فوجیوں کی تصاویر بھی بنائی ہیں جو مختلف اڈوں پر برطانبوی فوجیوں کے ساتھ تعینات تھے۔
  • ’2 پیرا‘ پر کام کرنے سے پہلے گولڈ نے بہت سے دوسرے طویل عرصے پر محیط فوٹوگرافی کے منصوبوں پر کام کیا ہوا ہے۔ انہوں نے ویلز کی آبادی ’پیٹاگونیا‘ پر ایک کتاب بھی لکھی ہے۔
  • گولڈ امید کرتے ہیں کہ اُن کا یہ تازہ ترین کام شائع ہو گا ’یہ ہم برطانوی عوام پر اِن افغانستان میں خدمات پیش کرنے والے فوجیوں کا قرض ہے کہ ہم اس کام کو شائع کریں اور اس سے حاصل ہونے والی آمدنی ان کی مدد کے لیے واپس جمع کروائیں۔‘ سب تصاویر ایڈ گولڈ کی ہیں جو ان کی ویب سائٹ پر موجود ہیں۔

ملٹی میڈیا

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔