حشرات جو دوسری دنیا کی مخلوق لگتے ہیں

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 16 مارچ 2013 ,‭ 21:59 GMT 02:59 PST
  • کیڑے، پتنگے اور مکھیوں کی یہ تصویریں دیکھ کر لگتا ہے کہ یہ کسی دوسری دنیا کی مخلوق ہیں۔ ان کی تصویریں پولینڈ کے فوٹوگرافر والدزک نے کھینچی ہیں
  • والدزک کو قریب سے فوٹوگرافی کا بہت شوق ہے۔ وہ کہتے ہیں ’میں اس میں بہت وقت لگاتا ہوں۔ میں اب بھی بہترین تکنیک اور لائٹ کے متعلق سیکھ رہا ہوں۔ مختلف حشرات کے شکلیں اور ان کے رنگ مجھے پسند ہیں۔‘
  • ہارس فلائي کی آنکھ عام آنکھوں کی طرح ہے یا پھر دو آنکھوں کے درمیان ایک تیسری آنکھ۔ اس کی پیشانی پر بھی ایک آنکھ نظر آتی ہے جو روشنی، تاریکی کا پتہ کرتی ہے
  • مختلف کیڑوں کی آنکھیں ایک ہی وقت میں ہزاروں مناظر کو قید میں کر سکتی ہیں
  • ڈریگن فلائی کی کمپاؤنڈ آنکھیں تقریباً تیس ہزار منفرد سیلز پر مبنی ہوتی ہیں جسے اوماٹیڈیا کہا جاتا ہے، اس میں سے ہر سیل دماغ کو سگنل بھیجتا ہے اور پھر اس سے وہ دنیا کا منظر بناتی ہے
  • کیڑے آرتھوپوڈ فائلم کا حصہ ہوتے ہیں ان کے جسم کا ایک ڈھانچہ ہوتا ہے اور اس کی مناسبت سے دیگر اعضاء ہوتے ہیں
  • اس طرح کے تمام کیڑوں کے چھ پیر ہوتے ہیں اور انہوں نے وقت کے ساتھ ہی اڑنے کی بھی صلاحیت پیدا کر لی ہے
  • فوٹوگرافر ولدزک کا کہنا ہے کہ یہ کیڑے چھوٹے ضرور ہیں لیکن رنگ برنگی شکل و صورت کے سبب وہ اپنی انوکھی پہچان رکھتے ہیں

ملٹی میڈیا

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔