اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پیر تیرہ مئی کا سیربین، حصۂ چہارم

توانائی کے بحران نے ان انتخابات میں ایک فیصلہ کن کردار ادا کیا۔ کاروباری شخص سے لیکر عام آدمی سب ایک ہی امید لگائے بیٹھے ہیں کہ ملک ميں نئي حکومت کی اولين ترجيحات ميں ملک کی معیشت اور توانائی کے بحران کا حل ڈھونڈنا ہوگا۔

اس حوالے سے سابق وزیر خزانہ شوکت ترین سے لیا گیا خصوصی انٹرویو آپ اس حصے میں دیکھیے۔

شوکت ترین کے مطابق ملک ميں فورن ايکسچينج کے ريزرو بہت کم ہيں۔ شوکت ترين صاحب کہتے ہيں کہ آنے والي حکومت کو آئي ايم ايف کي مدد لينا پڑے گي يا پھر کسي دوست کے پاس امداد کے ليے جانا پڑے گا۔ اس مشکل وقت ميں کيا کوئي دوست سامنے آئے گا يا آئي ايم ايف کي دوا کا کڑوا گھونٹ پينا ہي پڑے گا۔ کامران بخاري، آپ بتائيں کون سا دوست مدد کو آئے گا، امريکہ، يا سعودي عرب يا کوئي اور؟