بدھ انتیس مئی کا سیربین

بدھ 29 مئی کو نشر ہونے والے بی بی سی اردو سروس کے ٹی وی پروگرام سیربین کے چاروں حصے آپ اس صفحے پر دیکھ سکتے ہیں۔ یہ پروگرام ایکسپریس نیوز پر نشر کیا گیا تھا۔

سیربین ہفتے میں تین دن یعنی پیر، بدھ اور جمعے کو پاکستان کے مقامی وقت کے مطابق رات گیارہ بجے ایکسپریس نیوز پر نشر ہوتا ہے۔ اس کے ساتھ سیربین بی بی سی اردو ڈاٹ کام پر لائیو نشر کیا جاتا ہے۔

خیبرپختونخوا میں ارکان اسمبلی کی حلف برداری، فاٹا میں ڈرون حملہ

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخواہ کی اسمبلی میں 121 نو منتخب ارکان نے آج اپنے عہدے کا حلف اٹھا لیا ہے۔ ان ارکان میں 60 سے زیادہ ایسے لوگ ہیں جو پہلی مرتبہ اسمبلی پہنچے ہیں۔ تحریک انصاف کی مخلوط حکومت میں تجربہ کار اور نوجوان پارلیمینٹرین بھي شامل ہیں۔ تو کیا نئی حکومت صوبے کو درپیش تمام مسائل حل کر پائے گی؟

اس کا جائزہ لیا پشاور سے نامہ نگار عزیزاللہ خان نے۔

صوبہ خيبر پختونخوا ميں صوبائي اسمبلي کے حلف اٹھانے سے حکومت سازي کا عمل شروع ہو گيا ہے مگر دوسري طرف شمالي وزيرستان ميں ڈرون حملے ميں تحريک طالبان کے نائب امير سميت چار لوگ ہلاک ہو گئے ہيں۔ اس صورت حال پر بي بي سي پاکستان کے ايڈيٹر ہارون رشيد سے گفتگو اس حصے میں شامل ہے۔

سب سے آخر میں دیکھیے سوشل میڈیا پر آنے والی آپ کی آرا۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

عالمی خبریں

اس حصے میں شامل ہیں عالمی خبریں۔

افغانستان میں گوانتانامو کے قید خانے کی طرز پر برطانوی کیمپ بنائے جانے کے دعوے کو ایک برطانوی وزیر نے رد کر دیا ہے۔

تفصیلات کے ساتھ خالد کرامت۔

اس کے بعد دیکھیے مزید عالمی خبریں جن میں شامل ہیں:

برما کی شمال مشرقی ریاست شان میں مسلمانوں اور بدھ مت کے ماننے والوں کے درمیان تازہ جھڑپیں۔

فرانس میں حکام کے مطابق پیرس کے پاس ایک فوجی پر چاقو سے حملے کے واقعہ میں ایک 22 سالہ نوجوان کو گرفتار کیا گيا ہے۔

ڈرونز کے حوالے سے بی بی سے کے پروگرام ہارڈ ٹاک میں امریکی وزیر خارجہ جان کیری سے سوال کا جواب۔

آخر میں دیکھیے کہ مغربی شام میں بشار الاسد انتظامیہ کے مخالف کارکنوں کے دعوے کے مطابق سرکاری کارروائی میں عورتوں اور بچوں سمیت دو سو لوگوں کی ہلاکت کے شواہد سامنے آئے ہیں جب کہ حکومت نے اسے دہشت گردوں کے خلاف کارروائی قرار دیا تھا۔

تفصيل پيش کر رہے ہيں جاويد سومرو۔

نوٹ: ہو سکتا ہے اس ویڈیو رپورٹ میں بعض تصویریں آپ کي طبيعت کو ِگراں گزريں۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

بھارت میں ماؤ نواز باغیوں سے درپیش خطرہ

انڈیا میں ماؤ نواز باغی ملک کی سلامتی کے لیے سب سے بڑا داخلی خطرہ ہیں۔ یہ بات خود ملک کے وزیر اعظم من موہن سنگھ کئي بار کہہ چکے ہیں۔ اس کی ایک ہولناک مثال سنیچر کی شام مشرقی ریاست چھتیس گڑھ میں سامنے آئی، جب باغیوں نے کانگریس پارٹی کے ایک قافلے پر حملہ کر کے کئی سرکردہ رہنماؤں سمیت 24 افراد کو ہلاک کر دیا۔

ماؤ نواز باغیوں کے حملوں میں اب تک ہزاروں لوگ ہلاک ہو چکے ہیں لیکن ان کی سرگرمیوں پر قابو پانے کی تمام کوششیں ناکام ثابت ہوئی ہیں۔ تو کون ہیں یہ لوگ اور کس لیے لڑ رہے ہیں؟

اس کا جائزہ لیا دہلی سے سہیل حلیم نے۔

آخر میں شامل ہیں اس موضوع پر سوشل میڈیا پر آنے والی آپ کی آرا۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

کلک

ہر بدھ کو سیربین میں ٹیکنالوجی کا ہفتہ وار سلسلہ کلک شامل ہوتا ہے۔

کمپنیاں اپنا نام قائم رکھنے کے لیے کس طرح مسلسل مصروف رہتی ہیں۔ اور اب گیمنگ کنسول (gaming console) کی جنگ بھی دوبارہ شروع ہو گئی ہے۔ تو آئیے آج کے کلک میں دیکھتے ہیں کہ یہ جنگ کس طرح لڑی جا رہی ہے اور اس جنگ میں کس کی جیت ہوگی۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

اسی بارے میں