اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

بدھ اکتیس جولائی کا سیربین، حصہ اول

مسلم لیگ نون کے نامزد کردہ ممنون حسین صدر منتخب ہوگئے ہیں اور وہ چھ ستمبرکو اپنے عہدے کا حلف اٹھائیں گے تاہم دو بااختیار صدور کے بعد ان جیسے بظاہر بے ضرر صدرکے انتخاب کو اسلام آباد میں کیسے دیکھا جا رہا ہے کا جائزہ لیا ہے نامہ نگار صبا اعتزاز نے اپنی اس رپورٹ میں۔

پاکستان کے نومنتخب صدرممنون حسین کا کہنا ہے کہ ان کی خواہش ہے کہ وہ اپنے ملک اورخصوصا کراچی میں امن وامان کا مسئلہ حل کریں اورآگرہ میں پیدا ہونے کے ناطے انہیں بھارت کے ساتھ تعلقات کی بہتری میں کردارادا کرکے خوشی ہوگی۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ ایوان صدر کا سیاسی استعمال نہیں ہونے دینگے۔ نومنتخب صدرنے ان خیالات کا اظہار اپنے انتخاب کے بعد اسلام آباد میں بی بی سی کے نامہ نگار محمودجان بابرکوپہلا انٹرویو دیتے ہوئے کیا۔

مسلم لیگ نون نے ممنون حسین کوکیوں چنا اور دراصل وہ اس وقت کس انداز میں حکومتی معاملات کوچلا رہے ہیں جیسے مسائل پربات کی اسلام آباد میں نامہ نگارہارون رشید نے بات کی معروف تجزیہ کاراوراسی جماعت کے ایک سابق ایم این اے ایاز امیر سے اور ان سے پوچھا کہ میاں برادران کونئے صدرکے قد کاٹھ میں ایسا کیا نظر آیا کہ ان کو اس اہم آئینی عہدے کے لیے چن لیا۔