پیر 19 اگست کا سیربین

پیر بارہ اگست کو نشر ہونے والے بی بی سی اردو سروس کے ٹی وی پروگرام سیربین آپ اس صفحے پر دیکھ سکتے ہیں۔ یہ پروگرام ایکسپریس نیوز پر نشر کیا گیا تھا۔

سیربین ہفتے میں تین دن یعنی پیر، بدھ اور جمعے کو بی بی سی اردو ڈاٹ کام پر لائیو نشر کیا جاتا ہے۔

سیربین کا حصہ اوّل

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پاکستان کے وزیراعظم میاں نوازشریف نے قوم سے اپنے پہلے خطاب میں ان کی حکومت کو درپیش مسائل پرتفصیلی اظہارِخیال کے دوران ریاست سے لڑنے والے طالبان اوربلوچ علیٰحدگی پسندوں کوبات چیت کی دعوت دی ہے اورکہا ہے کہ وہ اب مزید جنازے نہیں اٹھاسکتے۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ان کی حکومت نے نئی افغان پالیسی تشکیل دی ہے اور اس کے علاوہ مجموعی طورپرخارجہ پالیسی پرنظرثانی کا فیصلہ کیا ہے۔ نوازشریف کی حکومت کو درپیش چیلنجوں اوران کی حکومت کی اب تک کی کارکردگی کا جائزہ نامہ نگارمحمود جان بابر نے اپنی رپورٹ میں لیا ہے۔

سیربین کا حصہ دوم

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

مصر میں صحرائے سینا کے علاقے میں ہونے والے مبینہ شدت پسندوں کے ایک حملے میں چوبیس پولیس اہلکار ہلاک ہوگئے ہیں جبکہ معزول صدر محمد مرسی کی حامی جماعت اخوان المسلمین کے چھتیس حامیوں کی جیل سے منتقلی کے دوران ہلاکت کی اطلاعات ہیں۔ درین اثنا آج یورپی یونین کے سفیروں نے ایک ہنگامی اجلاس میں شرکت کی ہے جہاں حالیہ بحران کے پیشِ نظر یورپی یونین کی جانب سے مصر کو دی جانے والی امداد پر نظرِ ثانی کی بات کي گئی۔ تفصیلات شفی نقعی جامعی سے۔

پاکستان میں اس بار آنے والے سیلاب سے اب تک ایک سو سے زیادہ افراد ہلاک ہو چکے ہیں جب کہ صوبہ پنچاب اور خیبرپختون خوا میں بڑے پیمانے پر دیہات اور فصلوں کو نقصان پہنچا ہے۔ قدرتی آفات سے نمٹنے کے قومي ادارے این ڈی ایم اے نے خبردار کیا ہے کہ آئندہ دو روز کے دوران دریائے سندھ میں بڑے سیلابی ریلے کا خدشہ ہے۔ ارم عباسی رپورٹ کر رہی ہیں۔

حصہ سوم

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پاکستان میں ہر نئی حکومت کے بنتے ہی حکمران کوئی اور وعدہ کریں نہ کریں دو وعدے تو ضرور کرتے ہیں، کہ وہ تھانہ اور پٹواری کلچرکو بدل کر رکھ دیں گے۔ لیکن وہ ان وعدوں کی تکمیل کے لئے کام کرتے کرتے انہیں بیچ میں ہی ادھورا چھوڑ جاتے ہیں جس کی وجہ ان شعبوں میں کام کرنے والوں کا اثرورسوخ بھی بتایا جاتا ہے۔ نامہ نگار شہزاد ملک نے ان میں سے ایک شعبے یعنی پٹواری کلچرکا جائزہ لیا اپنی اس رپورٹ میں

حکومت پنجاب کا دعوی ہے کہ 2014 میں پورے صوبے کا ریونیو ریکارڈ کمپیوٹرائز ہوچکا ہوگا۔ اس نظام کو کمپیوٹرائز کرنے والے پروجيکٹ کے انچارج ظفر اقبال سے بي بي سي کے نامہ نگار علی سلمان نے پوچھا کہ آخر اس نظام سے عام لوگوں کی زندگی میں کیا تبدیلی آئے گی؟

حصہ چہارم

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

انڈیا کی تیز رفتار اقتصادی ترقی کے باوجود ملک کی سوا ارب آبادی میں سے تقریبا نصف آج بھی بجلی جیسی بنیادی سہولت سے محروم ہے۔ بہت سے علاقوں میں بجلی کی لائن تو موجود ہے لیکن بجلي ندارد ہے۔ اور اس وجہ سے لوگوں کی زندگی، ان کی صحت، تعلیم و کاروبار سب متاثر ہوتا ہے۔ لیکن اب ملک کے کئی حصوں میں غیر سرکاری ادارے شمسی توانائی سے لوگو ں کی تاریک زندگیاں روشن کر رہے ہیں۔

انڈيا سے اب چلتے ہيں سنگاپور جہاں بجلي تو ہے ليکن جگہ کی کمی اور خاص طور سے کھیتی کے لائق زمین نہ ہونے کی وجہ سے تقریبا نوے فی صد غذائی اشیاء درآمد کی جاتی ہيں۔ لیکن اب سنگاپور کی حکومت کسانوں کو کھیتی کے روایتی طریقہ کار چھوڑ کر عُمودی طور پر کی گئی کھیتی یا ورٹکل فارمنگ کرنے پر زور دے رہی ہے۔