پاکستان کے وزیراعظم نواز شریف (فائل فوٹو)
اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

یمن پر سعودی حملے، پاکستان کی ترجیح کیا ہونی چاہیے؟

پاکستان کے وزیرِ دفاع خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ پاکستان نے سعودی عرب کی علاقائی سالمیت کو خطرے کی صورت میں اس کے دفاع کا وعدہ کیا ہے تاہم وہ کسی جنگ کا حصہ نہیں بن رہا لیکن قومی اسمبلی میں خطاب کرتے ہوئے ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ اس سلسلے میں کسی بھی فوجی اقدام سے پہلے پارلیمان کو اعتماد میں لیا جائے گا۔ فرقہ وارانہ تصادم کی شکل اختیار کرتی ہوئی یمن کی خانہ جنگی میں پاکستان کی عملی شمولیت کے خلاف جہاں ملک کی بڑی سیاسی جماعتوں کا موقف ہے کہ یمن کے مسئلے پر پاکستان غیر جانبداری کا مظاہرہ کرے وہیں بعض ماہرین کے خیال میں پاکستان کی ترجیح یہ ہونی چاہیے کہ وہ اپنی اندرونی سکیورٹی کو بہتر بنائے۔

کیا نواز شریف کی حکومت کے لیے سعودی حکام کی درخواست رد کرنا آسان ہے؟ اسلام آباد سے ارم عباسی کی رپورٹ