’میچ ونر‘ عادل رشید کو موقع دیں: مائیکل وان

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption گذشتہ کاؤنٹی سیزن میں 46 وکٹیں لینے والے عادل کا دوسرے ٹیسٹ کے لیے ٹیم میں جگہ بنانے کے لیے معین علی اور جیمز ٹریڈول سے مقابلہ ہے

انگلینڈ کے سابق کپتان مائیکل وان نے ملک کے شمالی علاقے یارکشائر سے تعلق رکھنے والے پاکستانی نژاد لیگ سپنر عادل رشید کے بارے میں کہا ہے کہ وہ میچ ونر ہیں اور انھیں ویسٹ انڈیز کے خلاف پہلے ٹیسٹ میچ میں موقع دیا جائے۔

انگلینڈ کا ویسٹ انڈیز کے خلاف دوسرا ٹیسٹ میچ منگل کو شروع ہو گا۔ دونوں ٹیموں کا پہلا ٹیسٹ میچ بغیر کسی نتیجے کے ختم ہوگیا تھا۔

مائیکل وان نے بی بی سی فائیو لائیو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’عادل دن میں چار بولنگ سپیل کریں گے اور ان میں سے ڈھائی سپیل کسی کام کے نہیں ہوں گے، لیکن ان کے ڈیڑھ سپیل بہت خاص ہوں گے، اور یہی وجہ ہے کہ انھیں ٹیم میں شامل کیا جانا چاہیے۔‘

جبکہ سابق انگلش لیگ سپنر گریم سوان کا کہنا ہے کہ ’عادل گوگلی بول کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں اور جو بیٹسمین نمبر آٹھ کے بعد بیٹنگ کرنے آتے ہیں وہ گوگلی بال نہیں کھیل سکتے۔ میں یہ اپنے ذاتی تجربے سے بتا رہا ہوں۔ اور انگلینڈ کے میدان سوکھے ہیں۔ یہاں کی پچیں بالکل خشک ہیں۔ ہمیں ایشز میں دو سپنروں کی ضرورت پڑے گی۔ اور یہ بہترین موقع ہے جہاں ہم یہ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ عادل دوسرا سپنر بن سکتا ہے یا نہیں۔‘

مائیکل وان کا ماننا ہے کہ 27 سالہ عادل اگر پہلے ٹیسٹ میں کھیلتا تو انگلینڈ ویسٹ انڈیز کی ٹیم کو آخری دن آؤٹ کر کے میچ جیت ستکی تھی۔

گرینیڈا میں پچ سپن بولروں کو سپورٹ کرتی ہے، اور گذشتہ کاؤنٹی سیزن میں 46 وکٹیں لینے والے عادل کا دوسرے ٹیسٹ کے لیے ٹیم میں جگہ بنانے کے لیے مقابلہ معین علی اور جیمز ٹریڈول سے ہے۔

وان کا کہنا ہے کہ اگر انھیں اس طرع کی وکٹ پر موقع نہیں دیا گیا تو انھیں سمجھ نہیں آ رہا کہ ان پر پھر کب انگلیڈ کے لیے چانس دیا جائے گا؟

اسی بارے میں