یونیسکو کے عالمی ورثے میں شامل نئے مقامات

اقوام متحدہ کا ثقافتی ادارہ یونیسکو ایسے تاريخی مقامات کو اپنے عالمی ورثے کی فہرست میں شامل کرتا جا رہا ہے جنھیں بطور خاص تحفظ کی ضرورت ہے۔ یہاں چند ایسے مقامات کی تصویریں پیش کی جا رہی ہیں جو 2015 میں یونیسکو کے عالمی ثقافتی ورثے کی فہرست میں شامل ہوئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

شمالی جرمنی کے ساحلی شہر ہمبرگ میں دنیا کے سب سے بڑ ے گودام کی تاریخی عمارت سپائشرشٹاٹ اپنی پلوں، نہروں اور بلند و بالا سرخ اینٹوں کی عمارتوں کے لیے مشہور ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP

جنوبی جاپان میں ناگاساکی سے دور گنکانجیما جزیرے پر موجود قلعہ 19 ویں صدی میں جاپان کے صنعتی انقلاب کی یادگار ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

مشرقی فرانس میں شیمپین کے علاقے میں انگور کے باغات کی خصوصیت یہ ہے کہ ان سے بننے والی شراب کو اس علاقے کے نام سے یاد کیا جاتا ہے یعنی اسے شیمپین کہا جاتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Unesco

اسرائیل میں بیت شعارم کا قبرستان جہاں بعض تہ خانے دوسری صدی قبل مسیح کے ہیں جہاں یہودی میتوں کو دفن کیا کرتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Unesco

مشرقی ترکی میں عہد روما کے دیاربکیر قلعے اور ہیوسیل باغات کو بھی اس فہرست میں جگہ ملی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Unesco

ایران کا قدیم شہر سوسا دنیا میں آثار قدیمہ کے بڑے مقامات میں سے ایک ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ PA

سکاٹ لینڈ کا فورتھ برج (پل) جو سنہ 1890 میں مکمل ہوا تھا اور ابھی تک اس پر سے ٹرین گزرتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Unesco

منگولیا کے عظیم خلدون پہاڑ کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ یہ چنگیز خان کی پیدائش اور مدفن کا مقام ہے۔

اسی بارے میں