فلکی مناظر کی کامیاب تصاویر

تصویر کے کاپی رائٹ YU JUN

یہ تصویر مکمل سورج گرہن کے دوران پیدا ہونے والے چھلے کی ہے جسے بیلیز بیڈز کہا جاتا ہے۔

چینی فوٹوگرافر يو جن نے یہ تصویر لی ہے اور یہ تصویر انسائٹ ایسٹرانومی فوٹوگرافی کے سنہ 2016 کے مقابلے میں مجموعی طور پر اور ’سورج کیٹیگری‘ میں بھی فاتح قرار دی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ CATALIN BELDEA AND ALSON WONG

سورج کی درجہ بندی کے لیے یہ تصویر دوسرے نمبر پر فاتح قرار دی گئي۔ یہ تصویر بھی سورج گرہن کے دوران ہی لی گئی ہے۔ کیٹلن بیلڈیا نے یہ تصویر لی ہے اور اس کی پراسیسنگ آلسن وونگ نے کی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ GYORGY SOPONYAI

قطبی روشنیوں کے زمرے میں انعام جیورجی سوپونیائی کی ٹوائلائٹ ارورا یا نور فجر نامی تصویر کو ملا۔ یہ تصویر ناروے کے سوالبارڈ میں لی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ KOLBEIN SVENSSON

قطبی روشنیوں کی کیٹیگری میں دوسرا انعام كولبین سوینسن کو ملا ہے جنھوں نے بلیک اینڈ وائٹ میں یہ تصویر لی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ NICOLAS OUTTERS

ججوں کو کہکشاں کے زمرے میں یہ تصویر بہت پسند آئی۔ نکولس آؤٹرز نے 20 منٹ کے ایکسپوژر کے ساتھ یہ تصویر ٹیلیسکوپ سے لی ہے جس میں چکردار کہکشاں کو مرکز میں رکھتے ہوئے باقی بے شمار کہکشاؤں کی تصویر شامل ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ IGNACIO DIAZ BOBILLO

ڈیاز بوبیلو کی یہ تصویر بھی ٹیلیسکوپ سے لی گئی ہے لیکن اس میں پانچ گھنٹے کے ایکسپوژر کا استعمال ہوا ہے۔ انھوں نے ہائی ریزولوشن کے لیے کئی تصاویر کے ایک ساتھ پرو دیا ہے۔ اس تصویر میں ان کے سافٹ ویئر کے مطابق تقریباً سوا لاکھ تارے نظر آتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ JORDI DELPEIX BORRELL

جورڈي ڈلپئكس بوریل کی یہ تصویر ہمارا چاند کے زمرے میں فاتح قرار پائی۔ مقابلے کے ایک جج ڈاکٹر كوكلا کے مطابق یہ تکنیکی طور پر بہترین تصویر ہے جو چاند کے اس حصے کو دکھاتا ہے جو کروڑوں سال کے اثرات کا گواہ ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ KATHERINE YOUNG

چاند کی تصویر کے لیے دوسرا انعام کیتھرین ینگ کو ملا ہے۔ انھوں نے چاند نکلنے کے دوران یہ تصویر لی ہے جس میں چاند زمین کے ماحول کو چیر کر اپنا صرف سرخ رنگ دکھا رہا ہے۔ یہ ایک فریم میں لی گئی تصویر ہے اور اس کی کوئي پراسیسنگ نہیں ہوئي ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ WING KA HO

ونگ کا ہو کی تصویر سٹی لائٹس میں ہانگ کانگ کی ایک گلی سے ستاروں کو گزرتے دکھایا گیا ہے۔ بعض اوقات روشنی کی آلودگی سے ستاروں کا دکھائی دینا مشکل ہوتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ DANI CAXETE

ڈینی كاشيٹے نے اپنی اس تصویر میں انسان کو چاند پر پہنچا دیا ہے۔ یہ تصویر ٹیلیسکوپ سے سپین کے علاقے کیڈالو دی لوز ویڈریوس میں لی گئي ہے اور ڈینی کے دوست نے اس کے لیے پوز کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ DAMIAN PEACH

سیارے، دم دار تارے اور شہابیے کے زمرے میں ڈیمیئن پیچ کی زحل کی تصویر فاتح قرار پائی۔ اس تصویر کے بارے میں انھوں نے کہا کہ رواں سال مارچ میں زحل کو دیکھنے کے لیے تقریباً موزوں ترین حالات تھے۔ اس میں زحل کے مختلف رنگوں کو دیکھا جا سکتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ GERALD RHEMANN

جیرالڈ ریمان نے کیٹالینا نامی اس دم دار ستارے کی یہ تصویر تقریباً ایک گھنٹے 20 منٹ میں لی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AINSLEY BENNETT

سکائی سپیس زمرے میں اینسلی بینیٹ کی یہ تصویر فاتح قرار پائی جو اکتوبر کے مہینے میں لی گئی تھی۔ بینٹ کی اس تصویر میں چاند، زہرہ، مریخ اور مشتری سب ایک ساتھ نظر آ رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ MIKKO SILVOLA

میكو سیلوولا نے فن لینڈ کے افق پر بادلوں کی یہ تصویر لی ہے جسے خاموش لہر کا نام دیا گيا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ YU JUN

یہ تصویر چین کی ایک آبزرویٹری میں لی گئی جس میں شہابیے سے پر ایک رات کو دیکھا جا سکتا ہے۔ یو جن نے یہ تصویر لاموسٹ ٹیلیسکوپ سے لی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ STEVE BROWN

ستارے اور شہابیے کے زمرے میں یہ تصویر فاتح رہی۔ اس میں سٹیو براؤن نے ہمارے آسمان میں موجود سب سے بڑے ستارے کو کیمرے کے لینس کی مدد سے مختلف رنگوں میں دکھایا ہے۔ اس ستارے کو ڈاگ سٹار بھی کہتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ PAVEL PECH

پاول پیک کی اس تصویر کو ستاروں اور شہابیوں کے زمرے مین دوسرا انعام ملا ہے۔ انہوں نے یہ تصویر جمہوریہ چیک کے سماوا نیشنل پارک میں لی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BRENDAN DEVINE

15سالہ برینڈن ڈیوائن کو چاند کی اس منفرد تصویر کے لیے سال کے نوجوان فوٹوگرافر کا انعام ملا۔ انہوں نے چاند کی 60 مختلف تصاویر کو ملا کر ایک تصویر تیار کی ہے۔ ججوں کا کہنا تھا کہ برینڈن نے چاند کو بالکل نئے طور پر پیش کیا ہے۔

تمام تصاویر انسائٹ ایسٹرونومی فوٹوگرافر آف دا ایئر کے تعاون سے حاصل کی گئي ہیں۔

اسی بارے میں