ایل او سی پر کشیدگی برقرار، امریکہ کی پاکستان اور انڈیا سے تحمل کی اپیل

Image caption پاکستانی فوج کا دعویٰ ہے کہ فائرنگ کی ابتدا انڈیا نے کی جس کا بھرپور جواب دیا گیا

کشمیر کو تقسیم کرنے والی متنازع لائن آف کنٹرول پر منگل کو پاکستانی اور انڈین افواج کے درمیان ایک مرتبہ پھر فائرنگ کا تبادلہ ہوا ہے۔

ادھر امریکہ کا کہنا ہے کہ وہ کشیدگی کم کرانے کے لیے پاکستان اور انڈیا سے بات چیت کر رہا ہے جبکہ اسی دوران کشیدہ صورت حال پر غور کرنے کے لیے پاکستان کی قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس بھی اسلام آباد میں منعقد ہو رہا ہے۔

٭ انڈیا کے جارحانہ عزائم علاقائی امن و سلامتی کے لیے خطرہ ہیں: نواز شریف

٭ پاکستان نے ایل او سی پر انڈین فوجی پکڑ لیا

پاکستانی فوج کے مطابق منگل کی صبح بھمبر سیکٹر میں انڈین فوج نے بلااشتعال فائرنگ کی جس پر پاکستان نے جوابی کارروائی کی۔

پاکستانی فوج کے شعبۂ تعلقاتِ عامہ کی جانب سے جاری کیے گئے بیان کے مطابق انڈین فوج نے منگل کو علی الصبح بھمبر سیکٹر میں باغ سر بروہ اور خان جر کے علاقوں میں چار بجے سے چھ بجے تک بلااشتعال فائرنگ کی۔

پاکستانی فوج کا کہنا ہے کہ انڈیا کی جانب سے کی جانے والی فائرنگ کا بھرپور جواب دیا گیا۔

فائرنگ سے کسی قسم کے جانی نقصان کی اطلاعات نہیں ملی ہیں۔ یہ رواں ہفتے مسلسل تیسرا دن ہے کہ لائن آف کنٹرول پر دونوں ممالک کی افواج کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ ہوا ہے۔

کشیدہ حالات کی وجہ سے ورکنگ باؤنڈری اور لائن آف کنٹرول کے دونوں جانب سرحد کے قریب واقع آبادیوں سے لوگوں کے انخلا کی اطلاعات بھی موصول ہو رہی ہیں۔

کشمیر اور لائن آف کنٹرول کی صورت حال کا جائزہ لینے کے لیے منگل کو ہی اسلام آباد میں قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس منعقد ہو رہا ہے جس میں وزیرِ اعظم اور چاروں صوبوں کے وزیرِ اعلیٰ بھی شریک ہوں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ PM house
Image caption ملک کی سیاسی جماعتوں نے کشمیر کے مسئلے کے حل کے لیے حکومت کا بھرپور ساتھ دینے پر اتفاق کیا ہے

گذشتہ روز کو پاکستان کے وزیراعظم میاں محمد نواز شریف کی زیرِ صدارت پارلیمانی جماعتوں کے اجلاس میں شریک رہنماؤں نے مسئلہ کشمیر پر حکومت کا ساتھ دینے اور مشترکہ کوششیں کرنے پر اتفاق کیا تھا۔

امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے پیر کو اپنی بریفنگ کے دوران کہا کہ وہ لائن آف کنٹرول پر پیش آنے والے واقعات کی رپورٹوں پر تو کچھ نہیں کہیں گے، تاہم وہ پاکستان اور انڈیا دونوں کو تحمل اور برداشت سے کام لینے پر زور دیتے ہیں۔

انھوں نے سرجیکل سٹرائیکس کے انڈین دعووں اور پاکستانی فوج کی جانب سے دیے جانے والے بیانات پر تبصرہ کرنے سے گریز کیا۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم یقین رکھتے ہیں کہ کشیدگی کو کم کرنے کے لیے مسلسل بات چیت ضروری ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں