اسلام آباد: سپین کے سفارت کار نے ’خودکشی‘ کر لی

Image caption پولیس نے غیر ملکی سفارت کار کے باورچی کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا کہ جینر کافی عرصے سے سانس کی بیماری میں مبتلا تھا اور اس کا علاج بھی چل رہا تھا

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے پوش علاقے ایف سیون ٹو میں سپین کے ایک سفارت کار اپنے گھر میں مردہ حالت میں پائے گئے ہیں۔

پولیس کا کہنا ہے کہ اب تک جو شہادتیں ملی ہیں اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ سفارت کار نے خود کو گولی مار کر خود کشی کی ہے۔

تھانہ کوہسار پولیس کے اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ ہوان ہوزے جینر نامی یہ شخص سپین کے سفارت خانے میں قونصلر کے عہدے پر تعینات تھا۔

اُنھوں نے کہا کہ مذکورہ سفارت کار کے باورچی عبدالحمید نے پولیس کو بتایا کہ بدھ کی شب کو اپنی ڈیوٹی ادا کرنے کے بعد گھر چلا گئے، جمعرات کو جب وہ کام پر آئے تو گھر کا اندر سے تالا لگا ہوا تھا اور متعدد بار دروازے پر دستک دینے کے باوجود دروازہ نہیں کھلا جس پر مقامی پولیس کو طلب کر لیا گیا۔

مقامی پولیس کے مطابق دروازہ توڑ کر جب پولیس اہلکار اندر داخل ہوئے تو جینر کی لاش فرش پر خون میں لت پت پڑی تھی اور اس کے ساتھ ہی 38 بور کا پستول بھی پڑا ہوا تھا جس سے بظاہر ایسا دکھائی دیتا ہے کہ اس نے خود کشی کی ہے۔

پولیس نے غیر ملکی سفارت کار کے باورچی کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا کہ جینر کافی عرصے سے سانس کی بیماری میں مبتلا تھے اور ان کا علاج چل رہا تھا۔

مقامی پولیس نے جائے حادثہ سے شواہد اکٹھے کر لیے ہیں اور لاش کو پوسٹ مارٹم کے لیے پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز بھجوا دیا ہے تاہم سفارت خانے کے اعلیٰ حکام کی اجازت کے بعد ہی پوسٹ مارٹم کیا جائے گا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ فورینسک رپورٹ کے بعد ہی معلوم ہو سکے گا کہ سفارت کار نے خود کشی کی ہے کہ یا اسے قتل کیا گیا ہے۔

اسی بارے میں