سفید چھڑی کے عالمی دن پر کوئٹہ میں نابینا افراد کی ریلی

کوئٹہ
Image caption ’اگر حکومت روزگار نہیں دے سکتی تو نابینا افراد کے لیے گزارا الاؤنس کا انتظام کیا جائے‘

سفید چھڑی کے عالمی دن کی مناسبت سے کوئٹہ شہر میں بینائی سے محروم افراد نے ریلی نکالی اور مظاہرہ کیا۔

ریلی کا آغاز کوئٹہ میٹرو پولیٹن کارپوریشن سے ہوا۔ ریلی کے شرکا مختلف شاہراہوں سے ہوتے ہوئے کوئٹہ پریس کلب پہنچے اور وہاں مظاہرہ کیا۔

مظاہرے میں شریک 6 بچوں کے باپ شفیع اللہ نے یہ شکایت کی کہ نابینا افراد سنگین مسائل سے دوچار ہیں۔

انھوں نے یہ شکایت کی کہ ان کے مسائل کے حل کی جانب کوئی توجہ نہیں دی جارہی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ حکومت کی جانب سے سرکاری ملازمتوں میں معذور افراد کے لیے کوٹہ مختص ہے لیکن اس پر عملدرآمد نہیں کیا جارہا ہے۔

Image caption اس مظاہرے میں بینائی سے محروم خواتین بھی شامل تھیں

انھوں نے دعویٰ کیا کہ ’جس محکمے میں جاؤ وہاں معذور افراد کے کوٹے پر تندرست افراد کو تعینات کیا گیا ہے۔‘

اس مظاہرے میں بینائی سے محروم خواتین بھی شامل تھیں۔ ان کا کہنا تھا ریاستی سرپرستی نہ ہونے کی وجہ سے نابینا افراد کی زندگی مشکلات سے دوچار ہے۔

اس موقع پر پاکستان ایسوسی ایشن آف بلائنڈ بلوچستان شاخ کے صدر نصراللہ شاہوانی نے یہ مطالبہ کیا کہ نابینا افراد کی تعلیم کے ساتھ ساتھ ان کے روزگار کے لیے بھی انتظام کیا جائے۔

ان کا کہنا تھا کہ اگر حکومت روزگار نہیں دے سکتی تو نابینا افراد کے لیے گزارا الاؤنس کا انتظام کیا جائے۔

Image caption حکومت کی جانب سے سرکاری ملازمتوں میں معذور افراد کے لیے کوٹہ مختص ہے لیکن اس پر عملدرآمد نہیں کیا جارہا ہے۔