گوجرانوالہ میں مقابلہ، 'القاعدہ' کے تین شدت پسند ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سی ٹی ڈی پنجاب کے ترجمان کے مطابق قانون نافذ کرنے والے اداروں کو خفیہ اطلاع ملی تھی کہ القاعدہ کے کچھ شدت پسند نے عبادت گاہوں کو نشانہ بنانے کی منصوبہ بندی کر رکھی ہے

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے ضلع گوجرانوالہ میں پولیس کے شعبہ انسداد دہشت گردی نے ایک کارروائی میں القاعدہ سے تعلق رکھنے والے تین مشتبہ شدت پسندوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

پولیس کے دعویٰ کے مطابق ان مقابلوں میں مارے گئے شدت پسندوں میں سابق گورنر سلمان تاثیر کے بیٹے شہباز تاثیر کے اغوا میں ملوث تین ملزم بھی شامل تھے۔

صحافی ناصر خان کے مطابق گذشتہ ہفتے جمعے کے روز سے اب تک پنجاب کے مختلف اضلاع میں سی ٹی ڈی پولیس کی یہ تیسری بڑی کارروائی ہے جس میں مجموعی طور پر 17 مشتبہ شدت پسند ہلاک ہوچکے ہیں۔

گوجرانوالہ میں سی ٹی ڈی پولیس اور القاعدہ کے مبینہ شدت پسندوں درمیان فائرنگ کا واقعہ سوموار کی رات اروپ کے علاقے میں ہوا۔

سی ٹی ڈی پنجاب کے ترجمان کے مطابق قانون نافذ کرنے والے اداروں کو خفیہ اطلاع ملی تھی کہ القاعدہ کے کچھ شدت پسند نے عبادت گاہوں کو نشانہ بنانے کی منصوبہ بندی کر رکھی ہے اور وہ گوجرانوالہ کے علاقے اروپ میں ایک جگہ پر چھپے ہوئے ہیں۔

ترجمان کے مطابق سی ٹی ڈی کی ایک ٹیم نے جب شدت پسندوں کے ٹھکانے پر چھاپہ مارا اور انھیں خود کو پولیس کے حوالے کرنے کا کہا تو شدت پسندوں نے ہتھیار پھینکنے کے بجائے چھاپہ مار ٹیم پر حملہ کردیا جس کے جواب میں پولیس نے بھی فائرنگ کی۔

ترجمان نے بتایا کہ دو طرفہ فائرنگ تھمنے کے بعد جب جائے وقوعہ کا جائزہ لیا گیا تو وہاں تین شدت پسندوں کی لاشیں پڑی ہوئی تھیں جو غالباً اپنے ہی ساتھیوں کی فائرنگ سے ہلاک ہوئے تھے جبکہ ان کے دو دیگر ساتھی فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔

ملزمان کے قبضے سے ایک کلاشنکوف اور دو پستول برآمد ہوئے۔

ترجمان کے مطابق فرار ہونے والے شدت پسندوں کی تلاش جاری ہے۔

جمعے کی شب بھی سی ٹی ڈی پولیس نے ڈیرہ غازی خان کی تونمی روڈ پر ایک مبینہ مقابلے میں 8 مشتبہ دہشت گردوں کو ہلاک کیا تھا جبکہ سنیچر اور اتوار کی درمیانی رات شیخوپورہ میں 6 شدت پسند ہلاک کئے گئے تھے۔

سی ٹی ڈی ذرائع کے مطابق شیخوپورہ کے پولیس مقابلے میں مارے گئے شدت پسندوں میں کالعدم تحریک طالبان پاکستان سے تعلق رکھنے والے حاجی محمد عرف پٹھان، ساجد اور ریاض حسین سابق گورنر سلمان تاثیر کے بیٹے شہباز تاثیر کے اغوا میں بھی ملوث تھے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں