پشاور میں انسداد پولیو ٹیم کے محافظ پولیس اہلکاروں پر بم حملہ، ایک ہلاک

پولیو مہم تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پیشاور کے بہت سے علاقوں میں پولیو کے خاتمے کے لیے مہم جاری ہے

پاکستان کے صوبے خیبر پختونخوا کے دارالحکومت پشاور میں حکام کا کہنا ہے کہ پولیو مہم کی نگرانی کے لیے موجود پولیس اہلکاروں پر ہونے والے بم حملے میں ایک اہلکارہلاک اور ایک زخمی ہوگیا ہے۔

پولیس کے مطابق یہ حملہ منگل کی صبح پشاور شہر کے مضافاتی علاقے داؤدزئی میں ہوا۔

پشاور کے مضافاتی علاقوں کے ایس پی فرقان بلال نے بی بی سی کو بتایا کہ 'پولیو مہم کی نگرانی کے لیے پولیس اہلکاروں نے ناکہ لگایا ہوا تھا کہ اس دوران سڑک کے قریب ایک نالے میں نصب ریموٹ کنٹرول بم سے ان پر حملہ کیا گیا۔'

انھوں نے کہا کہ حملے میں ایک اہلکار موقع ہی پر ہلاک ہوگیا جبکہ ایک زخمی ہو گیا جسے ہسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔

ولیس افسر کے مطابق نالے میں ایک دوسرا بم بھی نصب کیا گیا تھا تاہم اس کا علم ہونے پر بم ڈسپوزل سکواڈ نے اسے ناکارہ بنادیا ہے۔

یاد رہے کہ گذشتہ روز پشاور سمیت صوبے میں پولیو کے خطرے کا شکار 13 اضلاع میں انسدادِ پولیو مہم کا آغاز کیا گیا تھا۔

مہم کی کامیابی کے لیے اکثر اوقات حساس علاقوں میں پولیس اہلکاروں کو تعینات کیا جاتا ہے۔

خیال رہے کہ پشاور اور آس پاس کے اضلاع میں گذشتہ کچھ عرصہ سے قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکاروں کو ہدف بناکر قتل کرنے کا سلسلہ مسلسل جاری ہے۔

پیر کو چارسدہ میں سپیشل برانچ کے ایک سب انسپکٹر کو گھر کے سامنے مسلح افراد کی طرف سے فائرنگ کرکے ہلاک کیا گیا تھا۔

اس حملے کی ذمہ داری کالعدم تنظیموں تحریک طالبان پاکستان اور جماعت الاحرار نے قبول کرلی تھی۔

اسی بارے میں