عشرت العباد کی جگہ سعید الزماں صدیقی گورنر سندھ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سید الزماں صدیقی صدارتی امیدوار بھی رہے ہیں

پاکستان میں وفاقی حکومت نے بدھ کو صوبہ سندھ کے گورنر عشرت العباد کو تبدیل کر کے ان کی جگہ ریٹائرڈ چیف جسٹس سعید الزماں صدیقی کو گورنر بنانے کا اعلان کیا ہے۔

صوبہ سندھ میں گورنر جیسے اہم عہدے پر چودہ سال بعد تبدیلی کی گئی ہے اور عشرت العباد جنھیں مشرف حکومت میں گورنر تعینات کیا گیا تھا، ہٹا دیا گیا ہے۔

ریٹائرڈ چیف جسٹس سید الزاماں سابق چیف جسٹس سجاد علی شاہ کے بعد چیف جسٹس بنے تھے جب نواز شریف کے پہلے دور حکومت میں سجاد علی شاہ کی طرف سے نواز شریف کے خلاف مقدمہ ایک عدالتی بحران کی صورت اختیار کر گیا تھا اور ملک میں ایک دن میں دو سپریم کورٹ بن گئی تھیں۔

اس کے بعد سعید الزماں صدیق مسلم لیگ ن کے صدارتی امیدوار بھی رہے اور انھوں نے سنہ 2003 اورسنہ 2008 میں صدارتی انتخابات میں بھی حصہ لیا۔

ریٹائرڈ چیف جسٹس سعید الزماں کو گورنر تعینات کرنے کا فیصلہ بدھ کو وزیر اعظم نواز شریف اور صدر ممنوں حسین کے درمیان ملاقات میں کیا گیا۔

ایک مقامی اخبار کو اپنی تعیناتی کی تصدیق کرتے ہوئے سعید الزماں صدیقی نے کہا کہ صوبے میں امن و اماں بحال کرنا ان کی اویلین ترجح ہو گی۔ انھوں نے کہا کہ عشرت العباد کو حالیہ تنازعات کی وجہ سے ہٹایا گیا ہے۔ سعید الزماں صدیقی نے کہا کہ ان کی پوری کوشش ہو گی کہ وہ لوگوں کے مسائل حل کریں۔

عشرت العباد نے اپنے دور طالب علمی ہی میں اپنی سیاسی زندگی کا آغاز آل پاکستان مہاجر سٹوڈنٹ آرگنائزیشن سے کیا تھا۔

عشرت العباد نے سنہ 1990میں صوبائی اسمبلی کے انتخابات میں حق پرست کے امیدوار کی حیثیت سے کامیابی حاصل کی اور جام صادق کی حکومت میں صوبائی وزیر مقرر ہوئے۔

سنہ1992 میں فوجی آپریشن شروع ہونے کے بعد وہ روپوش ہو گئے اور ایک سال بعد لندن میں نمودار ہوئے جہاں انھوں نے سیاسی پناہ حاصل کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption عشرت العباد مشرف کے دورۂ حکومت میں گورنر بنے

عشرت العباد ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین کے قریب رہے لیکن سنہ 2002 تک وہ پس منظر میں رہے جب انھیں ڈاکٹر عمران فاروق کی جگہ ایم کیو ایم رابط کمیٹی کا کنوینئر مقرر کر دیا۔

عشرت العباد کو 27 دسمبر 2002 میں جب فوجی حکمران جنرل ریٹائرڈ مشرف نے گورنر مقرر کیا اس وقت وہ گورنر بننے والے نوجوان ترین شخص تھے۔