ترک صدر اردوغان پارلیمان کے مشترکہ اجلاس سے آج خطاب کریں گے

ترک صدر تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ترک صدر نے گذشتہ روز پاکستان کے صدر ممنون حسین سے ملاقات کی تھی

پاکستان کے دو روزہ دورے پر آنے والے ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان آج جمعرات کو پارلیمان کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کریں گے۔

خیال رہے کہ ایوان میں حزبِ اختلاف کی دوسری بڑی جماعت پاکستان تحریک انصاف نے اس اجلاس کا بائیکاٹ کرنے کا اعلان کر رکھا ہے۔

پارلیمنٹ سے خطاب کے بعد ترک صدر لاہور روانہ ہو جائیں گے جہاں مشہور شاہی قلعے میں وزیراعلیٰ پنجاب کی جانب سے ان کے اعزاز میں پرتکلف ضیافت دی جائے گی جس میں اعلیٰ سرکاری حکام کے علاوہ ملکی سیاسی قیادت کو بھی مدعو کیا گیا ہے۔

این ایس جی پر پاکستان کی حمایت پر ترک صدر کا شکریہ

تحریک انصاف ترک صدر کے لیے مشترکہ اجلاس میں شرکت نہ کرنے کے فیصلے پر قائم

’پاک ترک سکولز کے ترک عملے کو ملک سے نکل جانے کا حکم‘

جمعرات کے روز شائع ہونے والے مختلف اخبارات میں پنجاب حکومت کی جانب سے صدر رجب طیب اردوغان کے دورہ پاکستان کے حوالے سے اشتہارات بھی شائع کیے گئے ہیں جن میں پنجاب حکومت کی جانب سے ترک صدر کی لاہور آمد پر ان کا شکریہ ادا کیا گیا ہے۔

ترک صدر رجب طیب اردوغان دو روزہ دورے پر بدھ کے روز پاکستان پہنچے تھے جہاں پاکستان کے وزیرِ اعظم نواز شریف نے اپنی اہلیہ اور صاحبزادی کے ہمراہ ہوائی اڈے پر ترک صدر اور ان کی اہلیہ کا استقبال کیا۔

اسلام آباد آمد کے بعد رجب طیب اردوغان کو ایوان صدر لے جایا گیا جہاں پاکستانی صدر نے اپنے ترک ہم منصب کا مرکزی دروازے پر استقبال کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ PML-N/Twitter
Image caption پاکستان کے وزیرِ اعظم نواز شریف نے پنجاب کے وزیرِ اعلیٰ شہباز شریف کے ہمراہ ہوائی اڈے پر ترک صدر کا استقبال کیا

بدھ کے روز ایوان صدر میں ترک اور پاکستانی صدور کے درمیان ہونے والی ملاقات کے بعد جاری ہونے والے ایک سرکاری بیان میں کہا گیا تھا کہ پاکستان نے ترکی کی جانب سے نیوکلیئر سپلائرز گروپ کا رکن بننے کی بھارتی کوششوں پر پاکستانی مؤقف کی حمایت کرنے پر ترکی کا شکریہ ادا کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ PML-N/Twitter
Image caption رجب طیب اردوغان اپنی اہلیہ کے ہمراہ دو روزہ سرکاری دورے پر پاکستان آئے ہیں

اس موقع پر ترک وزیر خارجہ مولود چاؤش اوغلو، صدارتی ترجمان ابراہیم کالان، ترک سفیر صدیق باربر گرگن، پاکستان کے سیکریٹری خارجہ اعزاز احمد چوہدری اور دیگر اعلیٰ حکام شامل تھے۔

اس ملاقات کے بعد صدر مملکت نے ترک ہم منصب کے اعزاز میں عشائیہ دیا۔

ترک صدر کے اسلام آباد پہنچنے سے ایک رات قبل منگل کو حکومت نے ترکی کی ایک نجی تنظیم کے زیراہتمام چلنے والے سکولوں کے اساتذہ کو تین روز کے اندر پاکستان چھوڑنے کی جو ہدایت دی ہے۔

بعض مبصرین اس اقدام کو بھی صدر رجب طیب اردوغان کے غیر معمولی استقبال کا حصہ قرار دے رہے ہیں۔

اسی بارے میں