چنیوٹ میں باپ نے پانچ بچوں کو ’قتل کر کے خودکشی کر لی‘

Image caption قتل کیے جانے والوں میں چار لڑکے اور ایک لڑکی شامل ہیں جن کی عمریں تین سال سے دس سال کے درمیان بتائی گئی ہیں۔

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے ضلع چنیوٹ میں ایک شخص نے اپنے پانچ بچوں کو قتل کرنے کے بعد خود کشی کرلی ہے۔

قتل کیے جانے والوں میں چار لڑکے اور ایک لڑکی شامل ہیں جن کی عمریں تین سال سے دس سال کے درمیان بتائی گئی ہیں۔

صحافی عبدالناصر خان کے مطابق قتل اور خودکشی کا یہ واقعہ منگل کے روز ضلع چنیوٹ کے علاقے محمد والا میں پیش آیا جہاں پولیس کے مطابق محمد حسین نامی شخص نے پہلے اپنے پانچ کمسن بچوں کا گلا دبا کر ہلاک کیا اور پھر خود کو پھانسی دے دی۔

پولیس کے مطابق 35 سالہ محمد حسین فوج میں لانس نائیک کے عہدے پر تھے اور چھٹیوں پر گھر دلیل والا آئے ہوئے تھے۔ انھوں نے گھریلو جھگڑوں پر کچھ روز قبل ہی اپنی بیوی کو طلاق دے دی تھی۔

مارے جانے والے بچوں میں دس سالہ اقرا ،آٹھ سالہ وقاص، چھ سالہ شہباز، پانچ سالہ سبحان اور تین سالہ نعمان شامل ہیں۔

پولیس موقع پر پہنچ گئی ہے اور تفتیش کے لیے شواہد جمع کر رہی ہے۔

ادھر لانس نائیک محمد حسین کی سابقہ بیوی نازیہ کا الزام ہے کہ یہ قتل کی واردات ہے جس میں اس کے شوہر کے خاندان والے شامل ہیں۔

نازیہ کے مطابق ان کا اپنے سابقہ شوہر سے کوئی جھگڑا نہیں تھا لیکن سسرالیوں نے پہلے انھیں ورغلا کر ان کے درمیان طلاق دلائی اور اب محمد حسین کو بچوں سمیت قتل کردیا۔

نازیہ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ محمد حسین ان سے نہیں بلکہ اپنے بھائیوں اور والد سے تنگ تھے جو اسے وراثت میں حصہ نہیں دے رہے تھے، جس پر دو ماہ پہلے بھی انھوں نے کہا تھا کہ وہ خود کشی کرلیں گے۔

تاہم محمد حسین کے والد بہادر خان نے نازیہ کے الزام کو یکسر مسترد کردیا اور کہا کہ نازیہ کے ہاتھوں ان کے بیٹے کی تو دنیا اجڑ گئی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ان کے بیٹے نے نازیہ کے جھگڑوں سے تنگ آکر انتہائی قدم اٹھایا ہے۔

مقامی ڈی ایس پی حسن افتخار کا کہنا ہے کہ بظاہر یہ بچوں کے قتل کے بعد خودکشی کا معاملہ لگتا ہے تاہم اس کی تفتیش کے بعد ہی کسی حتمی نتیجے پر پہنچا جاسکے گا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں