بلاول بھٹو زرداری کا لاہور میں مستقل قیام کا فیصلہ

بلاول تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بلاول بھٹو زرداری کے نانا اور سابق وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو نے 49 برس پہلے پیپلز پارٹی کی بنیاد رکھی تھی

پاکستان پیپلز پارٹی کے چئیرمین بلاول بھٹو زرداری نے پنجاب کے صوبائی دارالحکومت لاہور میں سکونت اختیار کرنے اور اسی شہر سے سیاست کو آگے بڑھانے کا فیصلہ کیا ہے۔

اس فیصلہ کا اعلان بلاول بھٹو زرداری نے لاہور میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کے دوران کیا۔

بدھ کو بلاول بھٹو زرداری نے اعلان کیا کہ وہ آئندہ ماہ جنوری سے لاہور میں رہائشی رکھیں گے اور یہاں سے سیاست کریں گے۔

پیپلز پارٹی کے چیئرمین کے بقول جب بھٹو اور لاہور اکٹھے ہوں گے تو زبردست سیاست ہوگی۔

بلاول بھٹو زرداری ان دنوں صوبائی دارالحکومت لاہور میں ہیں جہاں وہ اپنی جماعت پیپلز پارٹی کے یوم تاسیس کی تقریبات میں شرکت کر رہے ہیں۔

بلاول بھٹو زرداری کے نانا اور سابق وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو نے 49 برس پہلے پیپلز پارٹی کی بنیاد رکھی تھی۔

لاہور پیپلز پارٹی کا سیاسی اور انتخابی قلعہ رہا تاہم سنہ 1990 کے انتخابات کے بعد پیپلز پارٹی کی اس شہر پر گرفت کمزور سے کمزور ہوتی گئی ہے۔

یہ پہلا موقع نہیں ہے جب پیپلز پارٹی کے قائدین میں سے کسی نے لاہور میں قیام اور اسی شہر سے سیاست سرگرمیوں کو آگے بڑھانے کی خواہش کا اظہار کیا ہے۔

پیپلز پارٹی کے بانی چیئرمین ذوالفقار علی بھٹو اور ان کی بیٹی بینظر بھٹو نے صوبائی دارالحکومت لاہور سے انتخاب لڑا اور یہاں سے کامیابی حاصل کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بلاول بھٹو زرداری نے اعلان کیا کہ وہ آئندہ ماہ جنوری سے لاہور میں رہائشی رکھیں گے

سابق صدر مملکت آصف علی زرداری کی بھی یہ خواہش رہی ہے کہ لاہور میں قیام کرکے اس شہر سے سیاست کی جائے۔

اسی خواہش کے لیے آصف علی زرداری نے سابق فوجی صدر جنرل پرویز مشرف کے دور میں اپنے خلاف مقدمات سے رہائی کے بعد لاہور میں سیاست کا فیصلہ کیا اور لاہور میں کینٹ کے علاقے میں ایک گھر کرایہ پر لے کر سیاسی سرگرمیوں کا آغاز کیا۔

تاہم کچھ عرصہ بعد آصف علی زرداری کے بیرون ملک جانے سے یہ مرکز ویران ہوگیا۔

لاہور کے جدید علاقے بحریہ ٹاؤن میں بلاول ہاؤس کی تعمیر بھی اس خواہش کی کڑی ہے اور بلاول ہاؤس پیپلز پارٹی کی سرگرمیوں کا مرکز ہے۔

آصف علی زرداری نے صدر مملکت کے منصب سے سبکدوش ہونے ایوان صدر سے لاہور بلاول ہاؤس آئے۔

سیاسی تجزیہ نگاروں کی یہ رائے ہے کہ پیپلز پارٹی کی قیادت کو صوبائی دارالحکومت لاہور پر توجہ دینے کی ضرورت ہے اور اس شہر کو نظر انداز کرکے پیپلز پارٹی کو پنجاب میں بحال نہیں کیا جا سکتا۔

اسی بارے میں