طیبہ کیس: والد کی معافی پر ملزمان کی ضمانت منظور

طیبہ کیس تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption طیبہ کے والد کے بیان حلفی کے بعد عدالت نے دونوں ملزمان کی عبوری ضمانت کی تصدیق کردی

اسلام آباد میں کمسن گھریلو ملازمہ طیبہ پر تشدد کے کیس میں ملازمہ کے والد کی جانب سے ملزمان کو معاف کرنے کے بعد عدالت نے دونوں ملزمان کی ضمانت منظور کر لی ہے۔

جمعے کو اسلام آباد کے ایڈشنل سیشن جج راجہ آصف کی عدالت میں کمسن گھریلو ملازمہ طیبہ پر تشدد کے مقدمے کی سماعت ہوئی۔

* طیبہ کے جسم پر تشدد کے نشانات واضح ہیں: رپورٹ

عدالت نے اس مقدمے کے مدعی اور طیبہ کے والد محمد اعظم کو بھی عدالت میں طلب کیا اور پوچھا کہ وہ اس مقدمے میں کیا کرنا چاہتے ہیں۔

نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق محمد اعظم کا کہنا تھا کہا اُن کی راجہ خرم علی اور اُن کی اہلیہ ماہین ظفر کے ساتھ کوئی ذاتی دشمنی نہیں ہے اور وہ اس مقدمے کو مزید جاری نہیں رکھنا چاہتے۔

ایڈشنل سیشن جج راجہ آصف نے مدعی مقدمہ سے استفسار کیا کہ وہ سوچ سمجھ کر بیان دیں کیونکہ اس سے پہلے بھی اُنھوں نے سپریم کورٹ میں کہا تھا کہ اس مقدمے کے ملزمان کو معاف کرنے کا بیان دباؤ میں آ کر دیا تھا۔

عدالت نے طیبہ کے والد کو سوچنے کے لیے دو گھنٹے کا وقت دیا اور وقت گزرنے کے بعد اُنھوں نے عدالت میں آ کر بیان دیا کہ وہ بغیر کسی دباؤ کے ان دونوں ملزمان کو معاف کرتے ہیں۔

اُنھوں نے کہا کہ یہ مقدمہ غلط فہمی کی بنیاد پر بنایا گیا تھا۔

طیبہ کے والد کے بیان حلفی کے بعد عدالت نے دونوں ملزمان کی عبوری ضمانت کی تصدیق کر دی۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے ایڈیشنل سیشن جج کی اہلیہ کی طرف سے کمسن گھریلو ملازمہ طیبہ پر تشدد کے واقعے کا از خود نوٹس لیا تھا جس کے بعد اسلام آباد ہائی کورٹ نے ایڈیشنل سیشن جج اور اس مقدمے کے ملزم راجہ خرم علی کو اُن کے عہدے سے ہٹا کر آفیسر آن سپیشل ڈیوٹی بنا دیا تھا۔

طیبہ کے طبی معائنے کے لیے ایک میڈیکل بورڈ تشکیل دیا گیا جنہوں نے اس بات کی تصدیق کی کہ طیبہ کے جسم پر تشدد کے 20 سے زائد نشانات ہیں۔

پولیس کی طرف سے سپریم کورٹ میں اس مقدمے کی تفتیش میں ایڈیشنل سیشن جج کی اہلیہ کو ذمہ دار قرار دیا تھا جبکہ راجہ خرم علی کو طیبہ کو طبی امداد کے لیے ہسپتال نہ لے کر جانے کا ذمہ قرار دیا تھا۔

اسی بارے میں