لاہور دھماکے پر پنجاب میں سوگ، تحقیقات جاری

لاہور دھماکہ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں پیر کو مال روڈ پر چیئرنگ کراس کے مقام پر ہونے والے خودکش دھماکے میں لاہور پولیس کے دو اعلیٰ افسران سمیت 13 افراد ہلاک ہوئے تھے

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے دارالحکومت لاہور میں پیر کی شب ہونے والے دھماکے کے بعد منگل کو صوبے بھر میں حکومتی سطح پر ایک دن کا سوگ منایا جا رہا ہے۔

دھماکے کی تحقیقاتی ٹیم نے منگل کو جائے وقوع کا دورہ کر کے مزید شواہد بھی اکھٹے کیے ہیں۔

لاہور میں خودکش حملہ: کب کیا ہوا

لاہور ایک بار پھر نشانہ

لاہور کی مال روڈ دہشت گردوں کا نشانہ

پیر کی شب چیئرنگ کراس کے مقام پر ہونے والے خودکش دھماکے میں ڈی آئی جی ٹریفک احمد مبین اور ایس ایس پی آپریشنز زاہد گوندل سمیت 13 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

دھماکے میں ہلاک ہونے والے سات پولیس اہلکاروں کی نمازِ جنازہ منگل کو بیدیاں روڈ کے پولیس سینٹر میں ادا کی گئی جس میں کورکمانڈر لاہور، گورنر پنجاب اور وزیرِ اعلیٰ پنجاب کے علاوہ شہریوں کی بڑی تعداد نے بھی شرکت کی۔

منگل کو سوگ میں لاہور کی تمام سرکاری عمارتوں کے پرچم سرنگوں اور دکانیں بند رہیں ـ مال روڈ کے تاجران اور لاہور ہائی کورٹ بار نے بھی یوم سوگ کا اعلان کیا البتہ شہر کے تمام سکول کھلے رہے۔

پاکستان کیمسٹ اینڈ ڈرگسٹ ایسوسی ایشن بھی لاہور دھماکے کے خلاف آج یومِ سوگ منا رہی ہے۔

Image caption پنجاب حکومت نے لاہور میں پیر کو ہونے والے دھماکے کے بعد آج صوبے بھر میں ایک روزہ سوگ کا اعلان کیا ہے

پاکستان کیمسٹ اینڈ ڈرگسٹ ایسوسی ایشن کی جانب سے جاری کیے جانے والے ایک بیان کےمطابق آج پورے ملک میں ہڑتال کی جائے گی۔

بیان کے مطابق پورے ملک میں فارما اور آلٹرنیٹ بزنس کے مینو فیکچر، ریٹیلر، ہول سیلر اور ڈسٹری بیوشن کے ہر سطح پر دفاتر بند رہیں گے۔

بیان کے مطابق پنجاب ڈرگ ترامیم واپس ہونے تک حکومت سے مذاکرات نہیں کیے جائیں گے۔

Image caption لاہور میں منگل کو ٹریفک معمول سے کم رہی

پنجابِ کے آئی جی مشتاق سکھیرا نے پیر کی شب ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کو بتایا کہ دھماکہ پیر کی شام چھ بج کر دس منٹ پر ہوا اور ہلاک ہونے والے 13 افراد میں سے سات سکیورٹی اہلکار تھے۔

آئی جی مشتاق سکھیرا کا یہ بھی کہنا تھا کہ ڈی آئی جی کے گن مین نے حملہ آور کو روکنے کی کوشش بھی کی تھی۔

پنجاب کے وزیرِ قانون رانا ثنا اللہ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ سی سی ٹی وی فوٹیج کی مدد سے حملہ آور کی شناخت ہو گئی ہے اور اس نے پیدل حملہ کیا۔ ان کے مطابق حملہ آور کا ہدف پولیس اہلکار تھے۔

پولیس کے مطابق اس دھماکے میں چھ سے آٹھ کلو دھماکہ خیز مواد کا استعمال کیا گیا۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں
مال روڈ دھماکے کے عینی شاہد

پنجاب کے وزیرِ صحت خواجہ سلمان رفیق نے جائے وقوعہ کے دورے کے بعد میڈیا کو بتایا کہ دھماکے میں 70 سے زیادہ لوگ زخمی بھی ہوئے ہیں جن کا علاج گنگا رام، میو، جناح اور سروسز ہسپتال میں جاری ہے۔

زخمیوں میں سے سات کی حالت نازک بتائی جاتی ہے۔

پیر کی شب ڈی جی رینجرز سمیت اعلیٰ عسکری حکام نے بھی جائے وقوعہ کا دورہ کیا تھا اور دھماکے کے بعد علاقے کو سیل کر دیا گیا جبکہ فارینزک ڈپارٹمنٹ نے شواہد اکٹھے کر کے تفتیش شروع کر دی ہے۔

اس دھماکے کی ذمہ داری کالعدم شدت پسند تنظیم تحریکِ طالبان سے الگ ہونے والے شدت پسند دھڑے جماعت الاحرار کی جانب سے قبول کی گئی ہے۔

خیال رہے کہ سات فروری کو نیشنل کاؤنٹر ٹیررازم اتھارٹی کی جانب سے لاہور میں دہشت گردوں کے حملے کے خطرے کے بارے میں الرٹ جاری کیا گیا تھا اور حفاظتی اور احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی ہدایت کی گئی تھی۔

نیکٹا کی جانب سے یہ مراسلہ سیکریٹری داخلہ پنجاب، صوبائی پولیس آفیسر (پی پی او) اور ڈی جی پاکستان رینجرز پنجاب کو بھیجا گیا تھا۔

اس مراسلے میں ہدایات جاری کی گئی تھیں کہ لاہور میں تمام اہم تنصیبات، ہسپتالوں اور سکولوں کی سخت نگرانی کی جائے۔

یہ لاہور میں گذشتہ برس مارچ میں گلشنِ اقبال پارک میں ہونے والے دھماکے کے بعد شدت پسندی کی سب سے بڑی واردات ہے۔ 27 مارچ 2016 کو ہونے والے حملے میں 74 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں