بختاور اور آصفہ کی مخالفت، عرفان مروت کا راستہ مسدود

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption آصفہ اور بختاور دونوں اہم قومی اور پارٹی معاملات پر اپنی رائے کا اظہار ٹوئٹر پر کرتی رہتی ہیں

بختارو بھٹو زرداری اور آصفہ بھٹو زرداری کی عرفان اللہ مروت کی پیپلز پارٹی میں شمولیت کی مخالفت کی خبروں کے پس منظر میں پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرپرسن آصف علی زرداری کے ترجمان فرحت اللہ بابر نے کہا ہے کہ اس معاملے پر پارٹی نے کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے۔

بی بی سی اردو سروس سے بات کرتے ہوئے فرحت اللہ بابر نے کہا کہ پاکستان پیپلز پارٹی میں کسی نئے شخص کو رکنیت دینے یا شامل کرنے کا ایک طے شدہ طریقہ کار ہے۔

انھوں نے کہا جب بھی کوئی شخص پارٹی میں شمولیت کا فیصلہ کرتا ہے اور پارٹی اس پر اتفاق کرتی ہے تو ایک باقاعدہ پریس ریلیز جاری کیا جاتا ہے۔

انھوں نے کہا کہ عرفاق اللہ مروت کی سابق صدر آصف علی زرداری سے ملاقات کے بعد پارٹی کی طرف سے کوئی پریس ریلیز جاری نہیں کیا گیا۔ انھوں نے نبیل گبول کی پارٹی میں دوبارہ شمولیت کے اعلان کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ اس فیصلے کے بعد ایک باقاعدہ پریس ریلیز جاری کیا گیاتھا۔

یاد رہے کہ مرحوم صدر غلام اسحاق خان کے داماد عرفان اللہ مروت نے چند دن قبل امریکہ میں سابق صدر آصف علی زرداری سے ملاقات کی تھی اور اطلاعات کے مطابق پاکستان پیپلز پارٹی میں شمولیت اختیار کرنے کی خواہش کا اظہار کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption آصفہ اور بختاور کی ٹویٹ

پیپلز پارٹی کے سربراہ آصف علی زرداری سے ملاقات کے بعد بے نظیر بھٹو کی دونوں صاحبزادیوں بختاور اور آصفہ کی طرف سے ٹوٹئر پیغامات سامنے آئے جس میں عرفان اللہ مروت کی پارٹی میں شمولیت کی شدید مخالفت کی۔

عرفان اللہ مروت سنہ انیس سو نواسی سے صوبائی سطح پر بہت سے اہم عوامی عہدوں پر فائز رہے ہیں جن میں ٹرانسپورٹ، ہیلتھ، داخلہ، تعلیم اور معدانیات کی وزارتیں شامل ہیں۔