جب مناسب موقع ہوگا تو وزیراعظم کلبھوشن یادو کا نام ضرور لیں گے: سرتاج عزیز

کلبھوشن تصویر کے کاپی رائٹ ISPR

مشیر خارجہ سرتاج عزیز نے پاکستان کے ایوانِ بالا یعنی سینیٹ کو بتایا ہے کہ انڈیا کی خفیہ ایجنسی را کے مبینہ ایجنٹ کلبھوشن یادو کو انڈیا کے حوالے کرنے کا کوئی امکان نہیں بلکہ اُن کے خلاف مقدمہ چلانے کا عمل شروع ہو گیا ہے۔

جمعہ کو چیئرمین سینیٹ رضا ربانی کی صدارت میں ہونے والے اجلاس میں وزیرِ اعظم کے مشیر برائے اُمورِ خارجہ سرتاج عزیز نے جمع کرائے گئے تحریری جواب میں کہا کہ پاکستانی حکومت نے انڈیا کو کلبھوشن یادو اور ان کی سرگرمیوں سے متعلق باضابطہ طور پر آگاہ کر دیا ہے۔

سرتاج عزیز نے بتایا کہ 'داخلی معاملات میں انڈین مداخلت، دہشت گردی اور شرانگیزی کے واقعات میں ملوث ہونے سے متعلق اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل کو بھی آگاہ کیا گیا ہے۔‘

انھوں نے سینیٹ کو یہ بھی بتایا کہ دیگر ممالک اور بین الاقوامی اداروں کو بھی انڈین مداخلت کے حوالے سے آگاہ کرنے پر غور کیا جا رہا ہے۔

نامہ نگار عبداللہ فاروقی کے مطابق سینیٹر طلحہ محمود کے سوال پر کہ 'کیا ریمنڈ ڈیوس کی طرح کلبھوشن یادیو کو بھی ریڈ کارپٹ پر واپس بھجوایا جاسکتا ہے؟' مشیر خارجہ نے ایسے کسی بھی امکان کو رد کرتے ہوئے کہا کہ ’پاکستان نے کبھی بھی کلبھوشن یادو کے خلاف ناکافی ثبوت موجود ہونے کی بات نہیں کی اور اس کے خلاف ایف آئی آر بھی درج کی جا چکی ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

سرتاج عزیز نے الزام لگایا کہ انڈیا کے ریاستی عناصر پاکستان میں دہشت گردی کروا رہے ہیں اور گرفتار کلبھوشن یادو بھی انڈیا کے حاضر سروس افسر تھے۔

مشیر برائے اُمورِ خارجہ نے سینیٹ کو بتایا کہ کلبھوشن یادو کے حوالے سے پاکستان نے انڈیا کو سوالات کی فہرست بھیجی ہے اور تفصیلی جوابات طلب کیے ہیں۔

اسی حوالے سے سینیٹر اعتزاز احسن نے بھی سرتاج عزیز سے سوال کیا کہ کیا وزیراعظم اپنی زبان سے کلبھوشن یادو کا نام لیں گے؟

جس پر سرتاج عزیز نے جواب دیا کہ ایسی کوئی بات نہیں کہ وزیراعظم نواز شریف کلبوشن یادو کا نام نہ لیں، جب مناسب موقع ہوگا تو وزیراعظم کلبھوشن یادو کا نام ضرور لیں گے۔

خیال رہے کہ پاکستان کے خفیہ اداروں نے گدشتہ برس مارچ میں صوبہ بلوچستان سے مبینہ طور پر انڈین خفیہ ادارے ’را‘ کے ایجنٹ کلبھوشن یادو کو گرفتار کیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں