آپریشن رد الفساد: ’پنجاب میں پولیس کی توجہ پشتونوں اور افغان مہاجرین پر‘

رانا ثنا اللہ تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے وزیر قانون رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ صوبے کے ان علاقوں میں پولیس تلاشی کا آپریشن کر رہی ہے جہاں پر پشتونوں اور افغان مہاجرین کی آبادی زیادہ ہے۔

امریکی خبر رساں ایجنسی اے پی کو دیے گئے انٹرویو میں وزیر قانون رانا ثنا اللہ نے آپریشن میں مخصوص قوموں پر زیادہ توجہ دینے کے بارے میں بتایا کہ صوبائی دارالحکومت لاہور میں ہونے والے شدت پسندی کے بدترین واقعات میں قبائلی علاقوں کے رہائشی ملوث تھے۔

پختونوں کو پنجاب میں رہنے کا پورا حق ہے: رانا ثنا اللہ

انھوں نے مزید بتایا ہے کہ گذشتہ برس ایسٹر کے موقع پر گلشن اقبال پارک میں ہونے والے خودکش حملے میں ملوث ہونے کے شک پر 11افراد کو گرفتار کیا گیا تھا اور ان کا تعلق قبائلی علاقے مہمند اور باجوڑ ایجنسی سے تھا۔

'ان کا تعلق قبائلی علاقوں سے تھا تو ہم نے سوچا کہ ہمیں ان علاقوں میں کارروائی کرنے کی ضرورت ہے جہاں پر باجوڑ، مہمند کے رہائشی آباد ہیں اور وہ علاقے جہاں پر ایسے افغان مہاجرین موجود ہیں جن کا اندراج نہیں ہوا ہے۔'

تاہم وزیر قانون نے ان الزامات کی تردید کی کہ حکومت شدت پسندوں کے خلاف کریک ڈاؤن کے دوران کی جانے والی پروفائلنگ میں پختونوں کو ہدف بنا رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پنجاب میں سکیورٹی آپریشن 'ردالفساد' کے تحت سینکڑوں افراد کو حراست میں لے لیا گیا ہے

دوسری جانب اے پی نے پنجاب پولیس کے حوالے سے بتایا ہے کہ صوبے بھر میں تقریباً دو ہفتوں سے جاری آپریشن میں اب تک 1300 مشتبہ شدت پسندوں کو گرفتار کیا گیا ہے جبکہ دو پولیس اہلکاروں نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ آپریشن کے آغاز سے اب تک 36 شدت پسند سکیورٹی فورسز کے ساتھ مقابلوں میں مارے گئے ہیں۔

خیال رہے کہ پاکستان میں دہشت گردی کی حالیہ لہر کے نتیجے میں آپریشن رد الفساد کے آغاز کے بعد سے پنجاب میں پشتون آبادی سے نسلی امتیاز برتنے کی خبریں پاکستانی میڈیا اور سوشل میڈیا پر گرم ہیں۔

خیبر پختونخوا اسمبلی نے پختونوں سے 'نسلی امتیاز' روا رکھے جانے کے خلاف ایک قرارداد بھی متفقہ طور پر منظور کی جبکہ حقوقِ انسانی کے پاکستانی کمیشن نے بھی پنجاب میں حکام کی جانب سے شدت پسندی اور دہشت گردی پر قابو پانے کی مہم کے دوران 'بظاہر نسلی بنیادوں پر امتیازی سلوک' کے واقعات پر شدید تشویش ظاہر کی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption آپریشن رد الفساد کے آغاز کے بعد سے پنجاب میں پشتون آبادی سے نسلی امتیاز برتنے کی خبریں پاکستانی میڈیا اور سوشل میڈیا پر گرم ہیں

حکومت پنجاب پر تنقید کے بعد صوبائی وزیرِ قانون رانا ثنا اللہ نے کہا تھا کہ دہشت گردوں کی تلاش کے عمل کے دوران کسی خاص کمیونٹی کو ہدف نہیں بنایا جا رہا اور ایسی کارروائیوں کے دوران عام شہریوں کو جن مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ہے حکومت اس پر معذرت خواہ ہے تاہم ان کارروائیوں کے بغیر دہشت گردوں کو ان کے مذموم مقاصد میں ناکام نہیں بنایا جا سکتا۔

اسی بارے میں