فوجی عدالتوں کے معاملے پر پیپلز پارٹی اپنی تجاویز پر قائم: فرحت اللہ بابر

فرحت اللہ بابر تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption فرحت اللہ بابر نے کہا کہ آئینی ترمیم میں ترامیم پیش کرنا ہر سیاسی جماعت کا حق ہے

وفاقی حکومت کی جانب سے پاکستان پیپلز پارٹی کے فوجی عدالتوں کی مدت میں دو سال کی توسیع پر رضامندی کے اعلان کے باوجود پیپلز پارٹی کے ترجمان کا کہنا ہے کہ وہ اپنی نو تجاویز پر قائم ہے۔

وفاقی حکومت نے دعوی کیا ہے کہ پارلیمنٹ میں حزب مخِالف کی سب سے بڑی جماعت پاکستان پیپلز پارٹی فوجی عدالتوں کے قیام میں دو سال کی توسیع کے معاملے پر رضامند ہوگئی ہے جبکہ پاکستان پیپلز پارٹی کا کہنا ہے کہ وہ اپنی اُن نو تجاویز پر قائم ہے جو پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری نے چند روز قبل ایک پریس کانفرنس میں بتائی تھیں۔

فوجی عدالتیں اور انصاف کے تقاضے

فوجی عدالتیں کتنی مؤثر؟

فوجی عدالتوں کی پہیلی اور ان کا مستقبل

وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے جمعرات کو فوجی عدالتوں میں توسیع کے معاملے پر ہونے والے اجلاس کے بعد میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ حزب مخالف کی جماعت پاکستان پیپلز پارٹی نے دہشت گردی کے مقدمات میں فوجی عدالتوں میں سیشن جج بیٹھانے کی تجویز واپس لے لی ہے۔

اُنھوں نے یہ بھی دعویٰ کیا تھا کہ پارلیمنٹ میں موجود تمام سیاسی جماعتیں بشمول پاکستان پیپلز پارٹی فوجی عدالتوں کی مدت میں مزید دو سال کی توسیع پر بھی راضی ہو گئی ہیں اور اس ضمن میں 23ویں آئینی ترمیم کا بل جمعے کو قومی اسمبلی کے اجلاس میں پیش کیا جائے گا۔

وفاقی وزیر خزانہ کے اس اعلان کے چند گھنٹے بعد پاکستان پیپلز پارٹی کے ترجمان فرحت اللہ بابر کی طرف سے ایک بیان میں اس کی تردید کی گئی ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اُن کی جماعت اپنی اُن تجاویز پر قائم ہے جن میں فوجی عدالتوں کی مدت ایک سال کرنے کی تجویز بھی دی گئی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستان پیپلز پارٹی اپنی نو میں سے سات تجاویز سے دستبردار ہو گئی جن میں فوجی عدالتوں میں سیشن جج بیٹھانے کی تجویز بھی شامل تھی

اُنھوں نے کہا کہ آئینی ترمیم میں ترامیم پیش کرنا ہر سیاسی جماعت کا حق ہے اور اگر جمعے کو ہونے والے قومی اسمبلی کے اجلاس میں مزید کوئی تجاویز آئیں تو ان پر بھی غور کیا جا سکتا ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ آئینی ترمیم کے اس مسودے میں فوجی عدالتوں میں زیرِ سماعت مقدمات میں ملزموں کو اپیل کا حق دینے کے ساتھ ساتھ قانون شہادت پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کی بات کی جائے گی۔

فرحت اللہ بابر کے اس بیان کے بعد بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے سیکریٹری اطلاعات چوہدری منظور نے کہا ان کی جماعت جمعے کو اپنی نو تجاویز کا مسودہ قومی اسمبلی کے اجلاس میں پیش کرے گی۔

واضح رہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی کے علاوہ پارلیمنٹ میں موجود سیاسی جماعتیں فوجی عدالتوں کی مدت میں مزید دو سال کی توسیع پر پہلے ہی رضامند تھیں۔

پاکستان پیپلز پارٹی نے چار مارچ کو فوجی عدالتوں کے قیام پر آل پارٹیز کانفرنس بلائی تھی تاہم اس کانفرنس میں شریک سیاسی جماعتوں میں اتفاق رائے نہیں ہوسکا تھا۔

اس کے بعد پیپلز پارٹی کی جانب سے فوجی عدالتوں کے حوالے سے نو تجاویز سامنے آئی تھیں جن میں فوجی عدالتوں کی مدت ایک سال مقرر کرنا، ان عدالتوں میں چلنے والے مقدمات کی سماعت کے لیے فوجی افسر کے علاوہ سیشن جج یا ایڈیشنل سیشن جج کی تعیناتی، ملزمان کی 24 گھنٹے میں عدالت میں پیشی اہم ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں