پاکستانی فوج کے ہتھیاروں میں ایل وائی 80 فضائی دفاعی نظام شامل

تصویر کے کاپی رائٹ ISPR
Image caption اتوار کو ایل وائی 80 کو پاکستانی فوج کے ہتھیاروں میں شامل کیے جانے کی تقریب راولپنڈی میں منعقد کی گئی اور اس موقعے پر مہمانِ خصوصی بری فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ تھے

پاکستانی فوج نے اپنے ہتھیاروں میں ایک موبائل ایئر ڈیفینس سسٹم (لوماڈز) شامل کر لیا ہے جو کہ کم اور متوسط اونچائی پر فضائی خطرات کا مقابلہ کر سکتا ہے۔

ایئر ڈیفینس نظام خودکار طور پر کسی طیارے یا میزائل کی ملکی حدود میں داخل ہونے پر اس کو نشانہ بنا سکتا ہے۔

ایل وائی 80 نامی یہ نظام چینی ساختہ ہے۔

پاکستان کا سٹیلتھ ٹیکنالوجی کے حامل کروز میزائل کا کامیاب تجربہk

اتوار کو ایل وائی 80 کو پاکستانی فوج کے ہتھیاروں میں شامل کیے جانے کی تقریب راولپنڈی میں منعقد کی گئی اور اس موقعے پر مہمانِ خصوصی بری فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ تھے۔

جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا تھا کہ 'ایل وائی 80 لوماڈز کی پاک فوج میں شمولیت سے فضائی خطرات سے نمٹنے کی صلاحيت میں اضافہ ہوگا۔‘

یاد رہے کہ رواں برس جنوری میں پاکستان نے آبدوز سے کروز میزائل پھینکنے کا تجربہ بھی کیا تھا جو کہ 450 کلو میٹر تک اپنے ہدف کو کامیابی سے نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

اس سے قبل گذشتہ سال دسمبر میں پاکستان نے زمین اور سمندر میں 700 کلومیٹر تک اپنے ہدف کو نشانہ بنانے والے کروز میزائل 'بابر ٹو' کا بھی کامیاب تجربہ کیا تھا۔

پاکستانی فوج کے مطابق مقامی طور پر تیار کردہ کروز میزائل زمین اور سمندر میں 700 کلو میٹر تک اپنے ہدف کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

اسی بارے میں