ایرانی جنرل کی دھمکی پر پاکستان کا ایران سے احتجاج

ایرانی فوجی تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption جیش العدل نامی شدت پسند گروپ ماضی میں بھی ایرانی سکیورٹی فورسز پر حملے کرتا رہا ہے

پاکستان نے ایرانی افواج کے سربراہ کی جانب سے پاکستانی علاقے میں شدت پسندوں کے 'محفوظ ٹھکانوں' کو نشانہ بنانے کی دھمکی پر ایران سے احتجاج کیا ہے۔

پاکستان کے محکمۂ خارجہ کی جانب سے منگل کو جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستان میں ایران کے سفیر مہدی ہنردوست کو دفترِ خارجہ طلب کر کے ان سے میجر جنرل محمد باقری کے بیان پر خدشات کا اظہار کیا گیا۔

ایران کی پاکستان میں شدت پسندوں کو نشانہ بنانے کی دھمکی

’کچھ ممالک پراکسی وار سے نقصان پہنچانا چاہتے ہیں‘

ایران کا سرحدی محافظوں کی ہلاکت پر پاکستان سے احتجاج

بیان کے مطابق ایرانی سفیر کو مطلع کیا گیا کہ اس قسم کے بیانات دونوں ممالک کے برادرانہ تعلقات کی روح کے منافی ہیں۔

دفترِ خارجہ کا کہنا ہے کہ تین مئی کو ایرانی وزیرِ خارجہ کے دورۂ پاکستان کے موقع پر دونوں ممالک نے سرحدی معاملات پر بھی تعاون میں اضافے پر اتفاق کیا تھا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستان نے ایران پر زور دیا ہے کہ مستقبل میں برادرانہ تعلقات کو متاثر کرنے والے بیانات سے گریز کیا جائے۔

خیال رہے کہ میجر جنرل محمد باقری نے پیر کو ایک بیان میں پاکستان کو خبردار کیا تھا کہ اگر پاکستان نے سرحد پار ایرانی علاقے میں حملے کرنے والے شدت پسندوں کے خلاف کارروائی نہ کی تو ایران پاکستان میں ان کے ٹھکانوں کو نشانہ بنائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ 'اگر دہشت گردوں کے حملے جاری رہے تو ہم ان کی محفوظ پناہ گاہوں اور ٹھکانوں کو نشانہ بنائیں گے چاہے وہ کہیں بھی ہوں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption میجر جنرل محمد باقری کا کہنا ہے کہ اگر دہشت گردوں کے حملے جاری رہے تو ایران ان کی محفوظ پناہ گاہوں اور ٹھکانوں کو نشانہ بنائے گا چاہے وہ کہیں بھی ہوں

جنرل باقری کا یہ بیان گذشتہ ماہ پاکستان اور ایران کے سرحدی مقام میرجاوا میں دس ایرانی سرحدی محافظین کی ہلاکت کے بعد آیا ہے۔

ایران نے اس حملے کے لیے سنّی شدت پسند گروپ 'جیش العدل' کو ذمہ دار قرار دیا ہے اور اس کا دعویٰ ہے کہ ان محافظین کو پاکستانی علاقے سے دور مار بندوقوں سے نشانہ بنایا گیا تھا۔

2014 میں بھی ایران نے جیش العدل کے ہاتھوں اپنے پانچ سرحدی محافظین کے اغوا کے بعد ان کی بازیابی کے لیے ایرانی فوجی اہلکار پاکستان بھیجنے کی بات کی تھی۔

اس وقت پاکستان نے کہا تھا کہ اگر ایران ایسا کرتا ہے تو یہ بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی ہوگی اور بعدازاں یہ معاملہ اغواکاروں سے بات چیت کے بعد حل کر لیا گیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں