لاہور چڑیا گھر کی سوزی کی موت
اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

سوزی چلی گئی، یادیں رہ گئیں

لاہور کے چڑیا گھر جانے والا ہر شخص، چاہے وہ بچہ ہو یا بڑا، سب کی سوزی کے ساتھ بے شمار یادیں جڑی ہیں۔ کسی کو سوزی کا باجا بجانا یاد ہے تو کسی نے اس کے ساتھ تصویر بنوا کر وہ لمحہ قید کر لیا۔ کچھ خوش نصیبوں نے تو سوزی کی سواری بھی کی ہوئی ہے۔ افسوس کہ اب صرف یہ یادیں ہی رہ گئی ہیں۔