تقریر کا موقع نہ ملنے پر سعودی شاہ سلمان کی مسلم رہنماؤں سے معذرت

سعودی عرب تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption عرب امریکی سربراہی اجلاس کے شرکاء

پاکستانی دفترِ خارجہ کے ترجمان نفیس ذکریا کا کہنا ہے کہ سعودی عرب کے فرمانروا نے اُن مسلمان ممالک کے سربراہان سے ذاتی طور پر معذرت کی ہے جن کو عرب اسلامی امریکی سربراہی کے دوران گفتگو کرنے کا موقع نہیں مل سکا۔

اسلام آباد میں ہفتہ وار بریفنگ کے دوران پاکستانی دفترِ خارجہ کے ترجمان نے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ 'ہمیں بتا دیا گیا تھا کہ یہ اُس شام وقت کی کمی کی وجہ سے ہوا تھا کیونکہ تقریباً 30 ممالک کے مسلمان رہنماؤں کو تقاریر کرنی تھیں لیکن وقت کی شدید قلت کی وجہ سے سعودی بادشاہ اور امریکی صدر کے علاوہ چند رہنما ہی بات کر پائے۔‘

نفیس زکریا کا کہنا تھا کہ اِس کے بعد سعودی فرمانروا نے ذاتی طور پر اُن رہنماؤں سے معذرت کر لی تھی جو اُس موقع پر گفتگو نہیں کر پائے۔

دہشت گردی سے متاثرہ ممالک میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے پاکستان کا نام نہ لینے کے سوال کے جواب میں ترجمان دفترِ خارجہ نے کہا کہ اگر صدر ٹرمپ کی تقریر کا بغور جائزہ لیا جایے تو اُنھوں نے صرف اُن ممالک کا نام لیا تھا جو اجلاس میں موجود نہیں تھے جن میں روس، چین، جنوبی افریقہ، یورپ اور انڈیا شامل تھے۔

نفیس زکریا کے مطابق اپنی تقریر میں اِس کے بعد صدر ٹرمپ نے مسلم ممالک کی قربانیوں کا تفصیل سے تذکرہ کیا جن میں عرب ممالک اور مشرقِ وسطی کی ریاستیں شامل ہیں۔

واضح رہے کہ پیر کے روز سعودی عرب میں منعقد ہونے والے عرب اسلامی امریکی سربراہی کے دوران پاکستانی وزیرِ اعظم نواز شریف کو تقریر کا موقع نہ ملنے پر پاکستان میں ذرائع ابلاغ، سوشل میڈیا اور حزبِ مخالف کی جماعتوں نے اِسے پاکستانی خارجہ پالیسی کی ناکامی قرار دیا تھا۔

اِس کے علاوہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی تقریر کے دوران دہشت کے خلاف جنگ میں پاکستان کے کردار یا شدت پسندی سے متاثر ہونے والے ممالک میں پاکستان کا نام نہ لیئے جانے پر شکوک و شبہات کا اظہار کیا جاتا رہا ہے۔

اسی بارے میں