کوئٹہ میں فائرنگ کے نتیجے میں ڈی ایس پی ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں فائرنگ کے ایک واقعے میں ایک پولیس آفیسر ہلاک جبکہ دوسرا زخمی ہوا ہے۔

دونوں اہلکاروں پر حملہ جیل روڈ ہدہ میں کیا گیا۔

کوئٹہ سے دو چینی باشندے اغوا کر لیے گئے

نامہ نگار محمد کاظم کے مطابق صدر پولیس سٹیشن کے ایک اہلکار نے بتایا کہ کوئٹہ پولیس کے ڈی ایس پی عمر رحمان اور انسپیکٹر بلال نماز کی ادائیگی کے لیے جامع مسجد ہدہ گئے تھے۔

پولیس اہلکار کے مطابق نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے مسجد کے قریب ان پر حملہ کیا۔ اس حملے میں دونوں شدید زخمی ہوگئے۔

دونوں کو علاج کے لیے ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں ڈی ایس پی عمر رحمان زخموں کی تاب نہ لاکر چل بسے۔

اس سے قبل ڈی ایس پی عمر رحمان کے بھائی ڈی ایس پی شمس بھی پولیس لائن میں ہونے والے خود کش حملے میں ہلاک ہوئے تھے۔

وزیراعلیٰ بلوچستان نواب ثناء اللہ زہری نے اس واقعے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے دہشتگردی کے اس واقعے کی مذمت کی ہے۔

وزیراعلیٰ نے پولیس حکام سے واقعے کی رپورٹ طلب کرتے ہوئے قانون نافذ کرنے والے حکام کو واقعہ میں ملوث افراد کی فوری گرفتاری کی ہدایت کی ہے۔

کوئٹہ میں رواں سال کے دوران پولیس اہلکاروں پر یہ چوتھا حملہ ہے۔

اس سے قبل تین حملوں میں ایک سب انسپیکٹر سمیت تین اہلکار ہلاک ہوئے تھے۔

گذشتہ سال بھی بم دھماکوں اور ٹارگٹ کلنگ کے دیگر واقعات میں کوئٹہ سمیت بلوچستان کے دیگر علاقوں ڈیڑھ سو سے زائد پولیس اور دیگر سیکورٹی اداروں کے اہلکار ہلاک ہوئے تھے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں