افغانستان الزام تراشیوں کی بجائے اپنے اندر جھانکے: آئی ایس پی آر

تصویر کے کاپی رائٹ ISPR
Image caption بیان میں افغانستان میں حالیہ دہشت گرد حملوں کے نتیجے میں قیمتی انسانی جانوں کے نقصان پر بھی افسوس کا اظہار کیا گیا (فائل فوٹو)

پاکستان فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر نے ایک بیان میں کہا ہے کہ پاکستان پر الزام تراشیوں کی بجائے افغانستان کو اپنے اندر جھانکنے اور مسائل کی نشاندہی کرنے کی ضرورت ہے۔

پاکستان فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق جی ایچ کیو میں کور کمانڈرز کی خصوصی کانفرنس منعقد ہوئی جس میں کابل حملے کے بعد افغانستان کی جانب سے پاکستان پر لگائے جانے والے بلا جواز الزامات اور دھمکیوں کا جائزہ لیا گیا۔

اشرف غنی کی طالبان کو دفتر کھولنے کی پیشکش

کابل کے سفارتی علاقے میں بم دھماکے میں 80 ہلاک

بیان کے مطابق کانفرنس کے شرکا نے دہشت گردی اور شدت پسندی کے خلاف جنگ میں افغانستان کی معاونت جاری رکھنے کا عزم بھی ظاہر کیا۔

آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری کیے گئے بیان میں افغانستان میں حالیہ دہشت گرد حملوں کے نتیجے میں قیمتی انسانی جانوں کے نقصان پر بھی افسوس کا اظہار کیا گیا اور افغان عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا گیا۔

خیال رہے کہ گذشتہ ہفتے کابل کے سفارتی علاقے میں ہونے والے دھماکے میں بقول افعان صدر اشرف غنی 150 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اس کے بعد منگل کو کابل میں ہونے والی بین الاقوامی کانفرنس میں افغان صدر اشرف غنی نے پاکستان پر ایک بار پھر دہشت گردوں کی پشت پناہی کرنے کا الزام لگایا ہے۔

افغان صدارتی محل سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ افغان حکومت پاکستان کے ساتھ بات چیت کے لیے تیار ہے لیکن پاکستان کو یہ باور کرانا ہوگا کہ پرامن افغانستان ہی پاکستان کے مفاد میں ہے۔

افغان صدر نے پاکستان پر الزام لگایا ہے کہ اُنھیں آج بھی پاکستان سے جارحیت کا سامنا ہے۔

اسی بارے میں