’گو نواز گو سے گون نواز گون‘

نواز تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

پاکستان کی سپریم کورٹ نے پاناما کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے وزیر اعظم پاکستان کو نا اہل قرار دے دیا ہے جس کے بعد انھوں نے وزیر اعظم کے عہدے سے استعفی دے دیا۔

جمعرات کی رات سے ہی پاناما لیکس کے مقدمے کا فیصلہ سوشل میڈیا پر ایک گرما گرم موضوع بنا رہا۔ جبکہ جمعے کی صبح عدالتی فیصلے کے بعد پاکستانی سوشل میڈیا میں پاناما ورڈکٹ، نواز شریف، گون نواز گون، پاناما پیپرز اور ایسے ہی دیگر موضوعات ٹرینڈ کرتے رہے۔

نواز شریف اور عدالتیں

نواز شریف کا متبادل کون؟

اس کے علاوہ عالمی سطح پر بھی پاناما ورڈکٹ سرفہرست کا ٹرینڈ تھا جبکہ ترک زبان میں 'وزیراعظم نواز شریف' بھی عالمی سطح پر ٹرینڈ کر رہا ہے۔

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کی سابقہ بیوی جمائما خان نے ٹویٹ کیا کہپ 'گون نواز گون' یعنی 'نواز گیا'

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

مریم نے ٹویٹ کیا کہ 'پیاری دنیا، مجھے پاکستان پر فخر ہے کہ یہاں کے وزیراعظم کو بدعنوانی کے الزام میں نااہل قرار دیا گیا ہے .... یہ ایک نئے پاکستان کا آغاز ہے۔'

شاہ زیب جیلانی نے لکھا کہ 'یہ معاملہ بدعنوانی کا کم اور ذمہ داری کا زیادہ ہے۔ یہ ہمیں یاد دلاتا ہے کہ پاکستان پر حکومت کرنے والا سیاسی طبقے کیسا ہے۔'

ندرت خواجہ کا کہنا تھا کہ 'پاکستان کی تاریخ: فوجی سے عدالتی بغاوت تک'

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

ماورا نے لکھا کہ 'یہ سب گو نواز گو سے شروع ہوا اور گون نواز گون پر آکر ختم ہوا۔'

مہتاب ارشد نے اپنے ردعمل کا اظہار کچھ یوں کیا کہ 'پاکستان میں پرانے دور کا آغاز ہو گئی ہے، مجھے اپنے سپریم کورٹ پر فخر ہے اور آپ پاکستانی ہونے پر بھی۔'

شہروز عارف نے لکھا کہ 'انسانیت میں اعتماد بحال ہوگیا۔ پاکستان زندہ باد۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

رانا عثمان نے پوچھا کہ 'کیا تبدیلی ہوگی اگر اگلا وزیر اعظم بھی اسی پارٹی سے ہوگا؟'

انڈیا کے سوشل میڈیا پر بھی اسی پر بحث چل رہی ہے اور بہت سے لوگ اس پر بات کر رہے ہیں.

اس موضوع پر انڈین سیاسی جماعت کانگریس کے سینیئر رہنما دگ وجے سنگھ نے لکھا کہ 'پاکستان کے وزیراعظم نواز شریف کو سپریم کورٹ نے نااہل قرار دے دیا ہے۔ وزیراعظم صاحب ہمارے یہاں کے پاناما پیپرز میں جنھیں مجرم بتایا گیا ہے ان کا کیا بنا؟'

انیل نے لکھا کہ 'پاکستان کی سپريم کورٹ کی عزت کرتا ہوں، انھوں نے وزیر اعظم کو استعفیٰ دینے پر مجبور کر دیا۔'

نونیت مندرا نے لکھا کہ 'یہ افسوسناک ہے۔ اس طرح کا کچھ کبھی انڈیا میں ہوگا اس کی مجھے امید بھی نہیں ہے! موجودہ وزیر اعظم کو نااہل قرار دینا .... پاکستان سپریم کورٹ کو سلام ہے۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں