’جس نئے پاکستان کے خواب میں دیکھتا تھا اس کی بنیاد سپریم کورٹ نے رکھ دی ہے: عمران خان

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption عمران خان کے مطابق بدعنوانی کے خلاف جنگ ابھی جاری ہے

پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے کہا ہے کہ جس نئے پاکستان کا خواب میں دیکھتا تھا اس کی بنیاد سپریم کورٹ نے رکھ دی ہے۔

تحریک انصاف نے اتوار کو اسلام آباد میں سپریم کورٹ کی جانب سے پاناما کیس میں وزیراعظم نواز شریف کو نااہل قرار دینے کی خوشی میں پریڈ گراؤنڈ میں یوم تشکر منایا۔

٭ فیصلو ہو تو جہان خان جیسا ورنہ نہ ہو!

٭ پاناما کیس میں عدالت کو کیا خدشہ تھا؟

٭ نواز شریف کے زوال کے اسباب

٭ ’ثابت ہو گیا کہ طاقتور بھی قانون کے ماتحت آ سکتا ہے‘

٭ وزیراعظم نااہل، خاندان کے خلاف مقدمے دائر کرنے کا حکم

اس موقع پر عمران خان نے شرکا سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دو نومبر کو سپریم کورٹ میں جانے کے فیصلے پر ان کے سیاسی کزن طاہر القادری اور پیپلز پارٹی سمیت دیگر نے کہا تھا کہ غلطی کی جبکہ ان کے کارکنوں اور صحافیوں میں مایوسی تھی۔

'مجھے لوگوں نے کہا کہ عمران خان اتنا بڑا موقع تھا، سڑکوں پر آنا، تھا، کیونکہ پاکستان میں عدالتوں میں انصاف نہیں ملنا ہے کیونکہ ہماری تاریخ ہے جب بھی ہماری عدالتوں نے طاقتور کے خلاف فیصلہ کرنا ہو تو وہ اس کے خلاف فیصلہ نہیں کر تے اور عدالتوں کی تاریخ یہ تھی کہ وہ طاقتور کے خلاف نہیں بلکہ کمزور کے خلاف فیصلہ کرتے تھے۔'

عمران خان نے مزید کہا کہ'آج میں اس لیے پاکستان سپریم کورٹ کو ساری قوم کی طرف سے خراج تحسین پیش کرتا ہوں کہ آپ نے پاکستانیوں کو امید دی اور آپ نے وہ کام کر دیا ہے کہ جو میں نئے پاکستان کے خواب دیکھتا تھا اس کی بنیاد رکھ دی ہے۔'

عمران خان کے بقول نیا پاکستان میٹرو اور انڈر پاسز سے نہیں بننا تھا بلکہ اس کی بنیاد عدل و انصاف پر رکھی جانی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

'ہم نے کرپشن کے خلاف جنگ جیتی نہیں ہے اور وہ جیتیں گے اور آج شہباز شریف آپ سے کہہ رہا ہوں کہ جتنا آپ کے ساتھ کرپٹ مافیا ہے اور ایل این جی عباسی آپ کو کہہ رہا ہوں کہ آپ بالکل نہ یہ سمجھیں کہ نواز شریف چلا گیا اور اب آپ کھائیں گے، آپ کے پیچھے آ رہا ہوں اور آصف زرداری آپ کو بھی نہیں چھوڑوں گا۔'

اس کے ساتھ عمران خان نے پاناما لیکس کی تحقیقات کرنے والی پانچ رکنی کمیٹی کی تعریف کی کہ انھوں نے دباؤ میں بہترین کام کیا۔

اس کے ساتھ انھوں نے سپریم کورٹ میں لندن میں فلیٹ کی فروخت اور بنی گالہ میں خریدی گئی اراضی سے متعلق جمع کروائی گئی منی ٹریل کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ' ابھی بھی میرے کے خلاف عدالت میں کیس ہے اور آج میں آپ سے کہتا ہوں کہ منی ٹریل میں اگر میری ایک بات بھی جھوٹ نکلی تو میں خود ہی پارٹی سے استعفیٰ دے دوں گا۔

اسی بارے میں