پاکستان: وزارت عظمیٰ کے لیے چھ امیدواروں کے کاغذات نامزدگی منظور

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

پاکستان کی سپریم کورٹ کی جانب سے نواز شریف کو نااہل قرار دیے جانے کے بعد قومی اسمبلی سیکریٹریٹ نے وزیر اعظم کے انتخاب میں حصہ لینے والے تمام اُمیدواروں کے کاغذات نامزدگی منظور کرلیےہیں۔

قومی اسمبلی کے سپیکر سیکریٹریٹ کے مطابق جن اُمیدواروں کے کاغذات نامزدگی منظور کیے گئے ہیں اُن میں حکمراں جماعت کے شاہد خاقان عباسی، قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ، پاکستان پیپلز پارٹی کے پارلیمانی لیڈر سید نوید قمر، متحدہ قومی مومومنٹ کی کشور زہرہ، جماعت اسلامی کے رہنما حافظ طارق اللہ اور ایک ہی نشست رکھنے والی جماعت عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید بھی شامل ہیں۔

٭ وزارت عظمیٰ کے امیدواروں کا پہلا قدم

٭دھیمے مزاج اور صلح جُو طبیعت کے مالک

اسلام آباد سے نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق شیخ رشید حزب مخالف کی دوسری بڑی جماعت پاکستان تحریک انصاف کے مشترکہ امیدوار ہوں گے۔

قومی اسمبلی سیکریٹریٹ کے مطابق ووٹنگ سے پہلے کوئی بھی امیدوار اپنے کاغذات نامزدگی واپس لے سکتا ہے۔

وزیراعظم کے انتخاب کا عمل مکمل ہونے کے بعد یکم اگست کی شام کو حلف برداری کی تقریب ایوان صدر میں ہوگی اور صدر مملکت نومنتخب وزیر اعظم سے حلف لیں گے۔ یلف برداری کی تقریب میں مسلح افواج کے سربراہوں کے علاوہ سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کی شرکت بھی متوقع ہے۔

حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز کی اس وقت قومی اسمبلی میں 187نشستیں ہیں جبکہ حکمراں اتحاد میں شامل دیگر جماعتیں بھی شاہد خاقاب عباسی کو ہی ووٹ دیں گے۔ حکمراں اتحاد میں جمیعت علمائے اسلام فضل الرحمن گروپ قابل ذکر ہے۔

پاکستان مسلم لیگ نون کے اُمیدوار شاہد خاقاب عباسی کے خلاف ایل این جی کے معاہدے میں بے ضابطگیوں کے بارے میں قومی احتساب بیورو میں ایک انکوائری چل رہی ہے جو ابھی تک مکمل نہیں ہوئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

دوسری جانب حزب مخالف کی جماعتیں ابھی تک متفقہ امیدوار سامنے نہیں لاسکی ہیں۔

پاکستان پیپلز پارٹی، پاکستان تحریک انصاف، ایم کیو ایم اور جماعت اسلامی اپنے اپنے امیدوار سامنے لاچکی ہیں، جبکہ عوامی نیشنل پارٹی نے ان انتخابات میں غیر جانبدار رہنے کا فیصلہ کیا ہے۔

قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف سید خورشید شاہ کا کہنا ہے کہ ایک طرف پاکستان تحریک انصاف کے پارلیمانی لیڈر شاہ محمود قریشی حزب مخالف کی جماعتوں کا مشترکہ امیدوار لانے کا واویلا کر رہے ہیں وہیں دوسری طرف عمران خان نے اپنے طور پر ہی شیخ رشید کو وزیر اعظم کے عہدے کے لیے امیدوار نامزد کردیا ہے۔

حکمراں جماعت کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم کا انتخاب جیتنے کے بعد اُن کی جماعت کی توجہ اُن منصوبوں پر ہو گی جو ابھی مکمل نہیں ہوئے۔

اس کے علاوہ ان کی جانب سے اس عزم کا بھی اعادہ کیا گیا ہے کہ انہی پالیسیوں پر عمل درآمد کیا جائے گا جو پالیسیاں سابق وزیر اعظم نواز شریف کے دور سے چلی آرہی ہیں۔

اسی بارے میں