”ڈاکٹر روتھ کو مدر ٹریسا سے نہ ملائیں‘

ڈاکٹر روتھ فاؤ تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ڈاکٹر روتھ فاؤ نے اپنی ساری عمر پاکستان میں کوڑھ جیسے موذی مرض کے مریضوں کی بحالی میں لگا دی۔

سوشلستان میں سابق وزیراعظم کا لاہور کی جانب سفر حاوی ہے اور اس پر روزانہ نت نئے ٹرینڈز سامنے آتے ہیں۔ ان ٹرینڈز اور اس سفر کا میابی یا ناکامی کا فیصلہ اس بات پر منحصر ہے کہ آپ کون سا چینل دیکھ رہے ہیں اور کس سیاسی جماعت کی حمایت کرتے ہیں۔ مگر اس ہفتے کے سوشلستان میں ہم بات کریں گے پاکستان میں کوڑھ کے موذی مرض میں مبتلا مریضوں کی مسیحا ڈاکٹر روتھ فاؤ کے بارے میں جن کا گذشتہ روز انتقال ہو گیا۔

پاکستان میں کوڑھ کے مریضوں کی مسیحا

ڈاکٹر روتھ فاؤ کے اس دنیا سے جانے کی خبر پر پاکستان کے مختلف سیاسی اور سماجی حلقوں کی جانب سے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا گیا۔

سوشل میڈیا پر سیاسی ٹرینڈز بنانے والے مشینوں کے ٹرینڈز کے باوجود ڈاکٹر روتھ فاؤ کا نام صفِ اول کا ٹرینڈ رہا۔

جہاں لوگ انھیں کوڑھ کے مریضوں کی مسیحا کہتے رہے وہیں بہت سوں نے انھیں پاکستان کی مدر ٹریسا قرار دیا۔

ان کے مرنے کے فوراً بعد سوشل میڈیا پر ان کی سرکاری اعزاز کے ساتھ تدفین کا مطالبہ شروع ہوا جس کے چند گھنٹوں بعد حکومت کی جانب سے سرکاری تدفین کا اعلان کیا گیا۔

اور اس اہم موقع پر سوشل میڈیا کے بعض اکاؤنٹس کو اعتراض تھا کہ انھیں مدر ٹریسا کیوں قرار دیا جا رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption ڈاکٹر روتھ فاؤ کو مدر ٹریسا کے ساتھ ملانے پر اعتراض

پاکستان ڈیفنس نام کے ٹوئٹر اکاؤنٹ نے لکھا کہ ’ہمیں ڈاکٹر روتھ فاؤ کو مدر ٹریسا سے ملانا بند کر دینا چاہیے کیونکہ مدر ٹریسا کا سارا رفاحی کام عیسائیت کی تریج کی خاطر تھا۔'

اس ٹویٹ کو ’شرمناک' قرار دیتے ہوئے سیموئیل ظہور نے لکھا ’انسانیت میں نفرت کہاں سے آگئی؟ انھوں نے اچھوتوں کی مدد کی جنھیں کوئی ہاتھ نہیں لگاتا تھا اور آپ یہاں سازشی تھیوریاں پھیلا رہے ہیں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ڈاکٹر روتھ فاؤ نے پاکستان میں کوڑھ کے مرض کے خاتمے کے لیے جدوجہد کی

مسعود جان خان نے لکھا ’آپ کے سازشی علم کو اکیس توپوں کی سلامی۔ ایک دن آپ ڈاکٹر روتھ فاؤ کو بھی بے ایمان قرار دے دیں گے کیونکہ وہ مسیحی تھیں۔'

شائستہ صفدر نے لکھا ’اگر مدر ٹریسا نے عیسائیت کی ترویج تو اس سے کسی کو کیوں مسئلہ ہوگا؟ ہر ایک کو اپنے مذہب کی ترویج، اشاعت اور تبلیغ کا حق ہے۔‘

ڈاکٹر فیم اقبال نے لکھا ’مدر ٹریسا نے اپنی ساری زندگی ٹی بی، کوڑھ، ایڈز اور ایچ آئی وی کے مریضوں کی دیکھ بھال میں گذاری، متعدد یتیم خانے چلائے۔‘

اس ہفتے کی تصاویر

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کراچی میں ٹریفک پولیس کی گاڑی پر فائرنگ کے نتیجے میں دو پولیس اہلکار ہلاک ہو گئے۔
تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستان کے یومِ آزادی کے موقع پر چلائی جانے والی خصوصی ٹرین کی تیاریاں آخری مراحل میں