پاکستان: کوئی بھی انڈین فوجی لائن آف کنٹرول عبور کر کے پاکستان میں داخل نہیں ہوا

پاکستانی فوج کے ادارے آئی ایس پی آر کے ڈائریکٹر جنرل نے انڈین میڈیا کے دعووں کے جواب میں کہا ہے کہ کوئی بھی انڈین فوجی لائن آف کنٹرول عبور کر کے پاکستانی حدود میں داخل نہیں ہوا۔

دفتر خارجہ سے جاری ہونے والی پریس ریلیز کے مطابق پیر کو لائن آف کنٹرول کے رکھچکری سیکٹر میں ’انڈین فوج کی بلا اشتعال فائرنگ نے غیر ریاستی عناصر کو آئی ای ڈی نصب کرنے کا موقع فراہم کیا جس کے نتیجے میں پاکستان کے تین فوجی اہلکار ہلاک ہوئے۔‘

اس واقعے کے بعد انڈین میڈیا پر یہ خبریں گردش کرنے لگی تھیں کہ انڈین فوج نے لائن آف کنٹرول عبور کر کے پاکستانی فوجیوں پر حملہ کیا ہے۔

لائن آف کنٹرول پر بچھڑنے والا بچہ ماں سے آن ملا

آئی ایس پی آر اور وزارت خارجہ نے انڈین میڈیا کے ان دعووں کو مسترد کر دیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption دونوں ممالک ایک دوسرے پر لائن آف کنٹرول پر بلااشتعل فائرنگ کے الزامات لگاتے رہتے ہیں

آئی ایس پی آر کے ڈائریکٹر جنرل میجر جنرل آصف غفور نے اپنی ٹوئٹ میں کہا کہ انڈین میڈیا کا یہ دعویٰ اسی بات کا تسلسل ہے جس کے ذریعے وہ اپنے عوام کو مطمئن کرنے کی کوشش کرتے رہتے ہیں۔

پاکستان کی وزارت خارجہ نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ ’انڈیا کے یہ جھوٹے دعوے لائن آف کنٹرول پر امن کے لیے اچھے نہیں ہیں۔‘

پاکستان کے وزارت خارجہ کے ترجمان ڈاکٹر محمد فیصل نے انڈیا کے نائب ہائی کمشنر کو طلب کر کے اس واقعے کی مذمت کی اور کہا کہ وہ 2003 میں ہونے والے فائر بندی کے معاہدے کا احترام کریں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں