’امریکی ہیلی کاپٹر کاجائزہ نہیں لیا گیا‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ہیلی کاپٹر کو اس آپریشن کے لیے خاص طور پر تیار کیا گیا تھا

چین نے اس رپورٹ کی تردید کی ہے کہ پاکستان نے اسامہ بن لادن کی ہلاکت میں استعمال کیے جانے والے امریکی ’سٹیلتھ‘ ہیلی کاپٹر کے ملبے تک اسے رسائی دی ہے۔

چین کی وزارتِ دفاع کا کہنا ہے ’اس رپورٹ کا کوئی سر پیر نہیں ہے اور نہ ہی کوئی بنیاد ہے۔‘

پاکستانی فوج کے خفیہ ادارے آئی ایس آئی یعنی انٹر سروسز انٹیلجنس ایجنسی نے بھی اس رپورٹ کی تردید کی ہے۔

واضح رہے کہ بین الاقوامی اخبار فنانشل ٹائمز نے کہا تھا کہ آئی ایس آئی نے چینی فوج کو ’بلیک ہاک‘ نامی ہیلی کاپٹر کا جائزہ لینے کے لیے رسائی دی تھی۔

خیال کیا جاتا ہے کہ یہ ایک یو ایچ 60 بلیک ہاک ہیلی کاپٹر تھا جس کی آواز کم کرنے اور ریڈار کی نظروں سے بچانے کے لیے اس میں تبدیلیاں کی گئی تھیں۔

دو مئی کو ہونے والے اس آپریشن کے دوران چار ہیلی کاپٹر استعمال کیے گئے تھے جن میں سے ایک میں خرابی پیدا ہوگئی تھی۔

امریکی فوجیوں نے جاتے ہوئے اس خطرے کے تحت ہیلی کاپٹر کو تباہ کر دیا تھا کہ اس کے حساس آلات کسی کے ہاتھ نہ لگ جائیں لیکن اس کی دم والا حصہ محفوظ رہا تھا۔

امریکی حکام کا کہنا ہے کہ فی الوقت اس رپورٹ کو ثابت کرنے کے لیے ان کے پاس ثبوت نہیں ہے لیکن ظاہر یہی ہوتا ہے کہ پاکستان کی جانب سے چینی فوج کو رسائی دی گئی ہے۔

خیال رہے کہ امریکی فوج کے خصوصی دستوں نے یکم اور دو مئی کی درمیانی شب ایبٹ آباد میں ایک کارروائی کرتے ہوئے القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کو ہلاک کیا تھا۔

پاکستانی حکام کو اس آپریشن سے بےخبر رکھا گیا تھا اور انہوں نے اسے اپنی خودمختاری کی خلاف ورزی قرار دیا تھا۔

اسی بارے میں