ووٹر لسٹوں کی چھان بین کا کام شروع

فائل فوٹو
Image caption انتخابی فہرستیں متعقلہ ضلعی الیکشن کمیشن کے دفاتر میں بھجوا دی گئی ہیں

الیکشن کمیشن نے ملک بھر میں گھر گھر جاکر کمپوٹرائزڈ ووٹر لسٹوں کی چھان بین کا کام شروع کردیا ہے۔

نیشنل ڈیٹابیس رجسٹریشن اتھارٹی یعنی نادرا کی طرف سے آٹھ کروڑ دس لاکھ ووٹروں کی کمپوٹرائزڈ ووٹروں کی انتخابی فہرستیں الیکشن کمیشن کے حوالے کردی گئی ہیں۔

اسلام آباد سے نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق الیکشن کمیشن کے ترجمان خورشید عالم نے بی بی سی کو بتایا کہ انتخابی فہرستیں متعقلہ ضلعی الیکشن کمیشن کے دفاتر میں بھجوا دی گئی ہیں جہاں پر مقامی عملے نے ووٹروں کی جانچ پڑتال کا کام شروع کردیا ہے۔

اُنہوں نے کہا کہ مقامی عملہ وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقوں کے علاوہ سندھ کے مختلف علاقوں میں آنے والے حالیہ سیلاب میں گھرے ہوئے علاقوں میں بھی جاکر ووٹروں کی تصدیق کا کام کر رہا ہے۔

الیکشن کمیشن کے ترجمان کے مطابق گھر گھر جاکر ووٹروں کی تصدیق کا کام تیس ستمبر تک مکمل کرلیا جائے گا۔ اُنہوں نے کہا کہ مارچ سنہ دوہزار بارہ میں کمپوٹرائزڈ ووٹروں کی حتمی فہرست جاری کردی جائے گی۔

اُنہوں نے کہا الیکشن کمیشن نے اس کام کے لیے مقامی تعلیمی اداروں کے اساتذہ کی خدمات حاصل کی ہیں جنہیں پانچ سو روپے ماہانہ کے حساب سے معاوضہ دیا جائے گا اور ہر ایک شخص کو تین سو خاندانوں کے ووٹروں کی تصدیق کرنے کا کام سونپا گیا ہے۔

خورشید عالم کے مطابق اگر ایک ووٹر کا اندراج کسی جگہ پر بھی ہوگیا تو دوسری مرتبہ اُس کا اندراج کسی طور پر بھی نہیں ہوگا جس سے بوگس ووٹروں کے خاتمے میں مدد ملے گی۔

نادرا کے وکیل عفنان کُنڈی کے مطابق نادرا کی طرف سے الیکشن کمیشن کو فراہم کی گئی فہرست میں اُن تمام افراد کے نام بھی شامل ہیں جن کا اندراج حال ہی میں ہوا ہے یا جنہوں نے نئے شناختی کارڈ بنوائے ہیں۔

اُنہوں نے کہا کہ جب تک ووٹروں کی حمتی فہرست جاری نہیں ہوتی تو اُس وقت اگر ملک میں ضمنی انتخابات ہوتے ہیں تو وہ موجودہ انتخابی فہرستوں کے مطابق ہی ہوں گے۔

یاد رہے کہ سپریم کورٹ نے انتخابی فہرستوں میں ساڑھے تین کروڑ کے قریب بوگس ووٹروں کے خارج کرنے سے متعلق الیکشن کمشن کو ہدایت کی تھی کہ وہ نادرا حکام کے ساتھ ملکر ان ووٹروں کو ختم کر کے نئی انتخابی فہرستیں تیار کرے۔

اسی بارے میں