پولیس کی گاڑی پر فائرنگ سے اہلکار ہلاک

فائل فوٹو
Image caption اس واقعے میں تین زخمی ہوئے تین اہلکار ہسپتال میں ہیں

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے دارلحکومت پشاور میں نامُعلوم مُسلح افراد نے پولیس کی گاڑی پر فائرنگ کی ہے جس کے نتیجہ میں ایک اہلکار ہلاک جبکہ تین زخمی ہوئے ہیں۔

پشاور میں ایک سنیئر پولیس اہلکار نے بی بی سی کے نامہ نگار دلاورخان وزیر کو بتایا ہے کہ بدھ کی صُبح تھانہ خزانہ کی حدود میں آریانا سڑک کے کنارے اس وقت نامعلوم افراد نے پولیس کی گاڑی کو نشانہ بنایا جب وہ علاقے میں گشت کررہی تھی۔

انہوں نے بتایا کہ حملے میں ایک پولیس اہلکار ہلاک جبکہ تین زخمی ہوئے ہیں۔

اہلکار کا کہنا تھا کہ حملے کے بعد پولیس کی بھاری نفری علاقے میں پہنچ گئی لیکن پولیس کے پہنچنے سے پہلے ہی نامعلوم مُسلح افراد فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے تھے۔

انہوں نے بتایا کہ پولیس نے گڑھی شاہ محمد میں کئی مقامات پر ناکے لگا کر لوگوں کی تلاشی لی ہے لیکن ابھی تک کسی قسم کی گرفتاری عمل میں نہیں آئی ہے۔

محافظ قتل

کُرم ایجنسی میں قومی اسمبلی میں فاٹا کے مُنتخب نمائندوں کے پارلیمانی رہنماء مُنیر اورکزئی کے سرکاری گارڈ کو اغواء کے بعد قتل کر دیاگیا ہے۔

Image caption پولیس نے علاقے میں تلاشی کی مہم شروع کی ہے

پارلیمانی رہنماء مُنیر اورکزئی کے سیکرٹری ناصر محمد نے بی بی سی کو بتایا کہ بدھ کی صُبح لوئر کرُم ایجنسی کے علاقے مندری میں مُنیر اورکزئی کے سرکاری محافظ حوالدار راج گل کی لاش ان کے اپنے گھر کے سامنے سے ملی ہے۔ انہیں فائرنگ کر کے ہلاک کیاگیا ہے۔

انہوں نے بتایا کہ راج گل کُرم ایجنسی میں لیویز فورس میں حوالدار تھے اور ان کو مقامی انتظامیہ نے کافی عرصہ سے اسلام آباد میں مُنیر اورکزئی کی حفاظت پر مامور کیا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ وہ عید سے پہلے ایک مہینے کے چُھٹی پر اپنےگھر کُرم ایجنسی گئے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ گزشتہ روز مُسلح شدت پسندوں نے ان کو اپنے گھر سے اغواء کر کے نامعلوم مقام پر منتقل کردیا تھا۔ ناصر محمد کے مطابق مُسلح شدت پسند طالبان تھے لیکن ابھی تک یہ معلوم نہیں ہوسکا کہ ان کا تعلق کس گروپ سے ہے۔

سنگِ مرمر کی کان کا واقعہ

بونیر میں پولیس افسر نور جمال خان نے بی بی سی کو بتایا کہ گزشتہ روز بمپوہا کے علاقے جوڑ میں سنگ مرمر کے کان میں پہاڑی تودہ گرنے کے بعد ملبہ ہٹانے کا کام آج دوسرے روز بھی جاری ہے۔ لیکن اس میں مزید کوئی لاش موجود نہیں ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز بونیر میں بمپوہا کے علاقے جوڑ میں سنگ مرمر کی کان سے پہاڑی تودہ گرنے کے نتیجہ میں چھ افراد ہلاک اور تین زخمی ہوئے تھے۔

اسی بارے میں