’شہباز تاثیر پاک افغان سرحدی علاقے میں‘

شہباز تاثیر کی گاڑی تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption شہباز تاثیر کو کچھ عرصہ قبل نامعلوم مسلح افراد نے لاہور سے اغوا کرلیا تھا

وفاقی وزیر داخلہ نے کہا ہے کہ اطلاعات کے مطابق مقتول گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے بیٹے شہباز تاثیر کو اغوا کر کے پاکستان اور افغانستان سرحد کے قریب لے جایا گیا۔

یہ بات رحمان ملک نے نیشنل ڈیٹا بیس رجسٹریشن اتھارٹی یعنی نادرا میں ایک تقریب کے بعد میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہی۔

یاد رہے کہ اس واقعہ کے فوری بعد پنجاب حکومت کی طرف سے یہ موقف سامنے آیا تھا کہ شہباز تاثیر کو کاروباری لین دین کے سلسلے میں اغوا کو خارج از امکان قرار نہیں دیا جاسکتا۔

بعدازں صوبائی وزیر قانون رانا ثناء اللہ کے مطابق خفیہ اداروں کی اطلاعات کے مطابق اغوا کار شہباز تاثیر کو وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقوں میں لے گئے ہیں۔ تاہم اُنہوں نے یہ نہیں بتایا کہ اس میں کوئی کالعدم تنظیم کے لوگ ملوث ہیں کہ نہیں۔

یاد رہے کہ شہباز تاثیر کو کچھ عرصہ قبل نامعلوم مسلح افراد نے لاہور سے اغوا کرلیا تھا۔

وزیر داخلہ رحمان ملک نے انکشاف کیا کہ القاعدہ کی طرف سے حکمراں جماعت پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کو اغوا کرنے کی منصوبہ بندی کا سراغ لگایا گیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ خفیہ اداروں نے اس سازش کو بے نقاب کیا ہے اور اس ضمن میں وزارت داخلہ کو تحریری طور پر بھی مطلع کیا گیا ہے۔

وزیر داخلہ کے بقول اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ القاعدہ اپنی حامی ایک اور کالعدم تنظیم تحریک طالبان پاکستان سے تعلق رکھنے والے افراد کے ساتھ مل کر بلاول بھٹو کو اغوا کرنے کی کوشش کریں گے۔

رحمان ملک کا کہنا تھا کہ ملکی اور غیر ملکی اداروں کو پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین کے علاوہ دیگر جماعتوں کے قائدین کی سکیورٹی کو مذید بڑھانے کے بارے میں لکھا گیا ہے۔ بلاول بھٹو زرداری ان دنوں برطانیہ کی ایک بین الاقوامی شہرت کی حامل یونیورسٹی میں زیر تعلیم ہیں۔

اسی بارے میں