امتحانی نتائج، پنجاب میں طلباء کا احتجاج

فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption گوجرانوالہ میں مشتعل طلباء نے عمارت پر دھاوا بول دیا اور ریکارڈ کو بھی آگ لگا دی (فائل فوٹو)

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے مختلف شہروں میں انٹرنیٹ پر غلط امتحانی نتائج جاری کرنے کے خلاف طلباءکے احتجاج، پولیس کے ساتھ جھڑپ میں کم از کم تیرہ طلباء زخمی ہوگئے ہیں۔

گوجرانوالہ میں مشتعل طلبہ نے انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈی بورڈ کی عمارت پر توڑپھوڑ کی اورریکارڈ کو آگ لگادی ہے۔

امتخانی نتائج میں بے ضابطگیوں کے خلاف صوبہ بھر کے طلباء گزشتہ دو روز سے احتجاج کررہے ہیں۔ اس احتجاج میں سنیچر کے روز اس وقت شدت آگئی جب گوجرانوالہ میں انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈی بورڈ کے باہر طلباء اکٹھے ہوئِے۔

مشتعل طلباء نے عمارت پر دھاوا بول دیا اور توڑ پھوڑ کے ساتھ ساتھ ریکارڈ کو بھی آگ لگا دی۔ پولیس نے مشتعل طلبہ کو منتشر کرنے کے لیے لاٹھی چارج کیا اور آنسو گیس کے شیل پھینکے۔

طلباء نے جواب میں پتھراؤ کیا جس پر پولیس نے ہوائی فائرنگ کی۔ پولیس اور طلباء کی درمیان چھڑپ کے نتیجے میں کم از کم تیرہ طلبہ زخمی ہوگئے۔

طلبہ کی توڑ پھوڑ کی وجہ سے بورڈ کی عمارت کو شدید نقصان پہنچا ہے اور تین ملازمین کے زخمی ہونے کی بھی اطلاعات ہیں۔

بعدازں طلباء نے جی ٹی روڈ پر احتجاج کیا جس سے ٹریفک کا نظام بھی بری طرح متاثر ہوا۔

گوجرانوالہ کے علاوہ پنجاب کے دیگر شہروں میں بھی طلباء نے احتجاج کیا۔ صوبائی دارالحکومت لاہور میں طلباء نے انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈی بورڈ لاہور کی عمارت کے باہر احتجاج کیا اور عمارت کے بیرونی گیٹ کو توڑنے کی کوشش کی۔

ملتان میں بھی طلباء نے بورڈ کی عمارت کا گھیراؤ کرکے احتجاج کیا جبکہ رحیم یار خان میں طلباء نے غلط امتحانی نتائج کے خلاف ایک ریلی نکالی اور شہر کے تعلیمی اداروں کو بند کروادیا۔