خروٹ آباد:ایف سی فوج سے رابطہ

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

کوئٹہ میں فرنٹئیر کانسٹیبلری کے ترجمان نے کہا ہے کہ ایف سی کے اہلکار لیفٹینٹ کرنل فیصل شہزاد کے خلاف انکوائری مکمل کرکے رپورٹ کارروائی کے لیے فوج کے جنرل ہیڈ کواٹر یا جی ایچ کیو کو بھیج دی ہے۔

پاکستان کے فوج کے افسر فیصل شہزاد اور تین پولیس افسران پر یہ الزام ہے کہ انہوں نےمئی میں کوئٹہ کےنواحی علاقے خروٹ آباد میں تین خواتین سمیت پانچ غیر ملکی باشندوں کو فائرنگ کرکے ہلاک کیا تھا۔مرنے والوں کا تعلق روس اور چیچنیا سے تھا۔

اس واقعہ کے بعد بلوچستان کی حکومت نے خروٹ آباد واقعہ کی تحقیقات کے لیے ہائی کورٹ کے جج محمد ہاشم خان کاکٹر کی سربراہی میں ایک تحقیقاتی ٹربیونل تشکیل دیا جس نے فرنٹئیر کانسٹیبلری یعنی ایف سی اور پولیس کو ان ہلاکتوں کا ذمہ دار ٹھرایا۔

تحقیقاتی ٹربیونل نے کوئٹہ کے سابق پولیس سربراہ داؤد جنیجیو اور فرنٹئیر کانسٹیبلری یعنی ایف سی کے لیفٹنینٹ کرنل فیصل شہزاد کے علاوہ دو اور پولیس افسروں کو بے جا طاقت کے استعمال کا مرتکب پاتے ہوئے ان کے خلاف کارروائی کی سفارش کی تھی۔

اسی بارے میں