’فوج کو بھی اعتماد میں لیا تھا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پاکستان چاہتا ہے کہ بھارت سے مذاکرات صرف برائے مذاکرات نہ ہوں بلکہ نتیجہ خیز ہوں: حنا ربانی

پاکستان کی وزیر خارجہ حنا ربانی کھر نے بھارت کو موسٹ فیورڈ نیشن یا سب سے پسندیدہ ملک کا درجہ دینے کا دفاع کرتے ہوئے کہا ہے کہ فوج سمیت ملک کے تمام اہم ادارے بھارت کے ساتھ بہتر تعلقات چاہتے ہیں ۔

لاہور میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے وزیر خارجہ حنا ربانی کھر نے کہا کہ وفاقی کابینہ نے بھارت کے ساتھ تجارتی تعلقات کو معمول پر لانے اور بہتر بنانے کی مقففہ طور پر منظوری دی ہے اور بھارت کو موسٹ فیورڈ نیشن یا سب سے پسندیدہ ملک قرار دینا اس سلسلے کی ایک کڑی ہے ۔

وزیر خارجہ کے بقول ملک میں کابینہ سے ماورا کوئی ادارہ نہیں ہے اور جب کابینہ ایک فیصلہ کرلیتی ہے تو پھر اس فیصلے پر عمل درآمد ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا ’ہمیں اپنے اداروں پر اعتماد ہونا چاہیے اور میں آپ کو مکمل یقین سے بتاسکتی ہوں کہ پاکستان میں ہر اہم ادارہ بھارت کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے کے حق میں ہے۔‘ انہوں نے کہا کہ کسی بھی معنی خیز بات چیت میں جانے سے پہلے ایک مشاورتی سلسلہ ہوتا ہے جس میں اہم سٹیک ہولڈرز کو اعتماد میں لیا جاتا ہے اور کئی سٹیک ہولڈرز میں سے فوج بھی ایک سٹیک ہولڈر ہے۔

حنا ربانی کھر نے کہا کہ پاکستان کی خارجہ پالیسی کا ایک ایم ستون یہ ہے کہ اس کے اپنے پڑوسی ممالک کے ساتھ اچھے تعلقات ہوں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان چاہتا ہے کہ بھارت سے مذاکرات صرف برائے مذاکرات نہ ہوں بلکہ نتیجہ خیز ہوں۔

پاکستان کی وزیر خارجہ نے کہاکہ بھارت پاکستان کو یورپین منڈی تک رسائی دینے کے معاملے میں روکاوٹ نہیں بنے گا۔انہوں نے بتایا کہ بھارت نے پہلے اس اقدام کو روکا تھا لیکن اب اس نے اصولی فیصلہ کرلیا ہے کہ وہ اب پاکستان کی یورپی منڈی تک رسائی کے راستے میں نہیں آئے گا۔

حنا ربانی کھر نے ترکی میں افغانستان کے بارے میں ہونے والی کانفرنس کو مفید قرار دیا اور کہا کہ تعمیری بات چیت کرنے کا موقع ملا۔

حنا ربانی کھر نے کہا کہ پاکستان کی اقوام متحدہ میں سیکیورٹی کونسل کی غیر مستقل نشست پر دو دوتہائی ووٹوں کی اکثریت سے کامیابی کے بعد اس تاثر کی نفی ہوگئی ہے کہ عالمی سطح پر پاکستان تنہائی کا شکار ہے۔

انہوں نے استفسار کہ کیا کسی ایسے ملک کو سکیورٹی کی غیر مستقل نشست پر کامیابی ہوسکتی ہے جو عالمی سطح پر تنہا ہو۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ پاکستان کی اقوام متحدہ میں کامیابی ایک نازک دور میں ہوئی ہے جب پاکستان کا کردار بہت اہم رہا ہے اور آنے والوں دنوں میں پاکستان اس سے زیادہ اہم کردار ادا کرے گا۔

جب ان سے یہ سوال کیا گیا کہ کیا امریکہ نے ایسی کوئی پیش کش کی ہے کہ ڈرون حملے سے پہلے اس کی پیشگی اطلاع دی جائے گی تو حنا ربانی کھر نے کہا کہ پاکستان کا اس بارے میں موقف بالکل واضح ہے کہ ڈورن حملے سود مند نہیں ہیں۔

پروفیسر برہان الدین ربانی کی ہلاکت کی تحقیقات کی بابت پوچھے گئے سوال پر پاکستانی وزیر نے جواب دیا کہ پاکستان ہلاکت کی تحقیقات میں معاونت کے لیے تیار ہے۔

اسی بارے میں